جدہ ،مردوں کی طرف سے سابقہ بیویوں کے خلاف ناانصافیوں کی تعداد میں اضافہ

جدہ ،مردوں کی طرف سے سابقہ بیویوں کے خلاف ناانصافیوں کی تعداد میں اضافہ

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


جدہ (مانیٹرنگ ڈیسک) سعودی میڈیا کے مطابق مردوں کی طرف سے علیحدہ ہونے والی بیویوں خصوصاً غیر ممالک سے تعلق رکھنے والی سابقہ بیویوں کے خلاف ناانصافیوں کی تعداد میں اضافہ دیکھنے میں آرہا ہے۔ قانون کے مطابق مرد بچے ماں کے حوالے کرنے کے پابند ہیں لیکن اکثرمرد اس قانون پر عمل نہیں کرتے خصوصاً اگر خاتون غیر سعودی ہو۔ عدالتی حکم کے مطابق ماں کو حق حاصل ہے کہ وہ ہفتہ میں ایک دفعہ یا مہینہ میں دو دفعہ بچوں سے مل سکتی ہے۔ اس سال رمضان کے آخر تک 24 خواتین نے اس قسم کی ناانصافیوں کے خلاف مقامی عدالتوں میں درخواستیں جمع کروائیں۔ مقامی میڈیا کے مطابق 18 عدالتوں میں مردوں کے خلاف 1377 شکایات درج کروائی گئیں۔ بچوں سے نہ ملنے دینے کے خلاف 182 شکایتیں، شادی کے معاہدے کے مطابق بیوی کے حقوق ادا نہ کرنے کے خلاف 345 شکایت جبکہ طلاق کیلئے 382 درخواستیں جمع کروائی گئیں۔ دریں اثنا ریاض میں طلاق کیلئے 99، جدہ میں 71 ، مدینہ میں 39 جبکہ مشرقی صوبے میں 41 درخواستیں ماہ صیام کے دوران موصول ہوئیں۔

مزید :

صفحہ آخر -