عرب ملک میں یہ خاتون برقعہ کو آگ کیوں لگارہی ہے؟ حقیقت جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہوجائے گا

عرب ملک میں یہ خاتون برقعہ کو آگ کیوں لگارہی ہے؟ حقیقت جان کر آپ کا بھی دل ...
عرب ملک میں یہ خاتون برقعہ کو آگ کیوں لگارہی ہے؟ حقیقت جان کر آپ کا بھی دل افسردہ ہوجائے گا

  

دمشق (مانیٹرنگ ڈیسک) داعش کے زیر قبضہ شامی علاقوں میں خواتین کے ساتھ روا رکھے گئے جبر اور ظلم کا نتیجہ یہ نکلا ہے کہ شامی خواتین خود پر مسلط ہر پابندی سے متنفر ہوگئی ہیں، یہاں تک کہ اپنی قدیم ثقافتی و مذہبی روایات سے بھی باغی ہوگئی ہیں۔ منبج شہر میں اس افسوسناک حقیقت کی مثال اس وقت دیکھنے میں آئی جب داعش سے نجات پانے والی شامی خواتین نے اپنے برقعے جلا کر آزادی کا جشن منایا۔

ویب سائٹ وائس نیوز کے مطابق سیرین ڈیموکریٹک فورسز نے منبج شہر کا تقریباً 70 فیصد حصہ داعش سے آزاد کروالیا ہے اور ان علاقوں کی خواتین داعش کی جانب سے نافذ کی گئی پابندیوں کی زنجیر کو گلے سے اتار کر پھینکتی ہوئی باہر نکل آئی ہیں۔ رپورٹ کے مطابق شہر کے شمالی حصے میں خواتین کے جشن کی ویڈیو سامنے آئی ہے جس میں داعش سے آزادی ملنے پر خواتین اپنے برقعے جلاتی ہوئے نظر آتی ہیں۔

’جیسے ہی یہ کام ہوا میں کہیں بھی جاکر پھٹ جاﺅں گی‘ کویت میں گرفتار ہونے والی غیر ملکی خاتون نے ایسی بات کہہ دی کہ کویتی پولیس کے بھی ہاتھوں کے طوطے اڑادئیے

ان خواتین کا کہنا ہے کہ داعش نے ان کی آزادی سلب کرکے انہیں گھروں میں قید رہنے پر مجبور کردیا تھا اور سر سے پاﺅں تک برقعہ اوڑھنا بھی ان پر عائد کی گئی پابندیوں کا حصہ تھا۔ خواتین کا کہنا ہے کہ وہ اس سے پہلے اپنی مرضی سے برقعہ پہنتی تھیں لیکن جب ان کے شہر پر قبضہ کرنے کے بعد داعش نے زبردستی برقعہ پہنانا شروع کیا تو ان کے لئے برقعہ بھی جبر کی علامت بن گیا۔

ویڈیو میں نظر آنے والی ایک خاتون نے اپنے برقعے کو جلاتے ہوئے کہا کہ وہ ہر اس بات سے بغاوت کرے گی جو اس پر زبردستی نافذ کی گئی تھی۔ اس موقع پر دیگر خواتین اور لڑکیاں تالیاں بجا کر برقعہ جلانے والی خاتون کو داد دیتی اور اس کی حمایت کرتی نظر آئیں۔

مزید : بین الاقوامی