زیادہ تر جرمن باشندے یورپی یونین اور ترکی کی ڈیل کے خلاف ہیں، سروے

زیادہ تر جرمن باشندے یورپی یونین اور ترکی کی ڈیل کے خلاف ہیں، سروے

برلن(این این آئی)ایک عوامی جائزے میں بتایا گیا ہے کہ زیادہ تر جرمن باشندے ترکی اور یورپی یونین کے درمیان مہاجرین سے متعلق ڈیل کے خلاف ہیں اور یورپی یونین کی رکنیت کے لیے ترکی کے ساتھ مذاکرات کا خاتمہ چاہتے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق جرمن اخبار میں شائع ہونے والے ایمنِڈ سروے میں کہا گیا ہے کہ 52 فیصد جرمن باشندے ترکی کے ساتھ اس ڈیل کا خاتمہ چاہتے ہیں، جب کہ اس ڈیل کی حمایت کرنے والے افراد کی تعداد صرف 35 فیصد ہے۔اس سروے میں 502 افراد کی رائے لی گئی، جس میں دو تہائی سے زائد افراد کا کہنا تھا کہ ترکی کو ہر طرح کی مالی امداد روکی جائے جب کہ 66 فیصد کی رائے تھی کہ ترکی کے ساتھ یورپی یونین کی رکنیت سے متعلق مذاکرات فوری طور پر ختم کردیے جائیں۔مارچ میں یورپی یونین اور ترکی کے درمیان طے پانے والے معاہدے کے تحت انقرہ حکومت کو پابند بنایا گیا تھا کہ وہ اپنے ہاں سے غیرقانونی طور پر بحیرہء ایجیئن کے راستے یورپی یونین میں داخل ہونے کی کوشش کرنے والے مہاجرین کو روکے اور یونان پہنچنے والے مہاجرین کو دوبارہ قبول کرے جب کہ اپنے ہاں موجود مہاجرین کی بہبود کے لیے اقدامات کرے۔ اس کے عوض ترکی کو تین ارب یورو امداد کے ساتھ ساتھ یونان سے واپس بھیجے جانے والے ہر مہاجر کے بدلے ترکی میں موجود ایک شامی مہاجر کو یورپی یونین کی رکن ریاستوں میں بسانے پر رضامندی ظاہر کی گئی تھی۔ اس کے علاوہ اس معاہدے میں ایک شق یہ بھی تھی کہ معاہدے پر عمل درآمد کی صورت میں ترک باشندوں کو شینگن ممالک کی ویزا فری انٹری دی جائے گی۔ تاہم ترکی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں، انسدادِ دہشت گردی کے سخت قوانین اور اظہار رائے پر عائد پابندیوں کے ساتھ ساتھ وہاں گزشتہ ماہ ہونے والی بغاوت کی ناکام کوشش کے بعد شروع ہونے والے سخت کریک ڈاؤن کی وجہ سے اس شق پر عمل درآمد اب تک ممکن نہیں ہو پایا ہے۔

، جس پر انقرہ حکومت سخت برہم ہے۔اب تک اس ڈیل پر عمل درآمد ہو رہا ہے گزشتہ برس اسی راستے سے ایک ملین سے زائد مہاجرین یورپی یونین پہنچنے تھے، جن میں سے سب سے بڑا حصہ اب جرمنی میں ہے۔ مہاجرین کے اس سیلاب کی وجہ سے یورپ اور خصوصاجرمنی میں سماجی اور سیاسی سطح پر خاصا تناؤ بھی دیکھا گیا ہے۔

مزید : عالمی منظر