امن وامان اور شہر یوں کی حفاظت کیلئے جذبہ جہاد سے سرشار ہو کر فرائض ادا کئے جائیں ، امین وینس

امن وامان اور شہر یوں کی حفاظت کیلئے جذبہ جہاد سے سرشار ہو کر فرائض ادا کئے ...

 لا ہور (اپنے کرا ئم ر پو رٹر سے ) سی سی پی او لاہور کیپٹن (ر) محمد امین وینس نے سانحہ کوئٹہ کے فوری بعد لاہور کی سیکیورٹی کو ہائی الرٹ کرنے کے لیے سی سی پی او آفس میںآپریشنز و انویسٹی گیشن ونگ کے ایک ہنگامی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ شہر کے داخلی و خارجی راستوں پر پولیس چیک پوسٹوں پر نفری بڑھا دی جائے اور ان چیک پوسٹوں پر کمانڈوز اور سنائپرز بھی تعینات کیے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ کوئٹہ کا افسوس ناک واقعہ اس بات کا ثبوت ہے کہ دہشت گردوں کا نہ کوئی مذہب ہے نہ کوئی مسلک نہ کوئی سمت ہے اور نہ کوئی منزل یہ کچھ بھی کر سکتے ہیں لہذا ایسے دشمن کے ناپاک اِرادوں کو ناکام بنانے کے لیے تمام وسائل کو بروئے کار لایا جائے، ان حالات میں شہریوں کی حفاظت اور امن و امان کی فضا کو برقرار رکھنے کے لیے فرائض جذبہ جہاد سے سر شار ہو کر ادا کرنے کا وقت ہے۔اجلاس میں ڈی آئی جی انویسٹی گیشن سلطان چوہدری، ڈی آئی جی آپریشنز ڈاکٹر حیدر اشرف، ڈی آئی جی سیکورٹی محمد ادریس، ایس ایس آپریشنز منتظر مہدی کے علاوہ سی ٹی او اور تمام ڈویژنل ایس پیز بھی موجود تھے۔ سی سی پی او نے 14اگست کے روز شہر میں امن و امان کی فضا کو برقرار رکھنے کے لیے پیٹرولنگ کے نظا م کو مزید موثر بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ شہر کے مختلف علاقوں با لخصوص بند روڈ پٹھان اور افغان بستیوں میں سرچ آپریشن روزانہ کی بنیاد پر کیے جائیں علاوہ ازیں شہر کے مختلف علاقوں میں قومبنگ آپریشن شروع کیے جائیں جس کی نگرانی ڈویژنل ایس پی خود کریں۔اُنہوں نے کہا کہ موجودہ صورتحال میں شہر کی اہم عمارتوں، شاپنگ مالز، غیر ملکی ریسٹورنٹ ، ہسپتالوں اور پارکوں کی سیکورٹی پر بطور خاص توجہ کی جائے اور شہر میں موبائل ناکوں کی شکل میں سنائپ چیکنگ کا عمل شروع کیا جائے۔ اُنہوں نے کہا کہ چائنیز کی سیکورٹی پر مامور گاردوں کو ایس پی ہیڈ کوارٹرز خود چیک کریں اور اس بات کو یقینی بنائیں کہ ڈی ایس پی لائنز ان گاردات کو روزانہ کی بنیاد پر چیک کیا کریں۔انہوں نے کہا کہ شہر میں ون ویلنگ کی کسی قیمت پر اجازت نہ دی جائے اور ون وہلنگ کے مقدموں میں ریکارڈ یافتہ ملزمان کو نظر بندکرنے کے لیے محکمہ داخلہ سے منظوری حاصل کی جائے۔ انہوں نے مزید کہا کہ شہر میں رینٹ اے موٹر سائیکل کا کام کرنے والوں سے بھی شورٹی بانڈ لیے جائیں کہ وہ یوم آزادی پر کسی بھی منچلے نوجوان کو125 موٹر سائیکل کرایہ پر نہیں دیں گے ۔ انہوں نے مزید کہا کہ یوم آزادی کے روز موٹر سائیکل کے سلنسر نکال کر ہلڑ بازی کرنے اور فیملیز کو پریشان کرنے کی کسی قیمت پر اجاز ت نہ دی جائے اور ایسا کرنے کے مرتکب نوجوانوں اور افراد کے خلاف فوری اور موقع پر قانونی کاروائی عمل میں لائی جائے۔سی سی پی او نے سی ٹی او کو ہدایت دیتے ہوئے کہا کہ یوم آزادی پر مال روڈ پر ٹریفک کے بہاؤ کو یقینی بنانے کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جائیں اور ٹریفک کے بہاؤ میں رکاوٹ کا سبب بننے والوں سے آہنی ہاتھوں سے نمٹا جائے۔

مزید : علاقائی