قندیل کوکسی اور جگہ قتل کرکے لاش گھر میں لائی گئی، تفتیشی افسران

قندیل کوکسی اور جگہ قتل کرکے لاش گھر میں لائی گئی، تفتیشی افسران
قندیل کوکسی اور جگہ قتل کرکے لاش گھر میں لائی گئی، تفتیشی افسران

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ملتان( ویب ڈیسک) قندیل قتل کیس پولیس نے تحقیقات کا دائرہ وسیع کر دیا ہے پولیس کی تحقیقات نے ایک نیا موڑ لے لیا ہے۔ روزنامہ جنگ کی رپورٹ کے مطابق قندیل کو اس مکان میں قتل نہیں کیا گیا قندیل کو کہیں اور جگہ پر مار کر اس کی لاش اس گھر میں لائی گئی ہے، اس بارے میں پولیس تحقیقات کر رہی ہے۔

پولیس ذرائع کے مطابق والدین کو قتل کے بارے میں علم تھا پولیس نے قندیل کے بھائی اکرم کو بھی قتل میں نامزد کر دیا ہے۔ دوسری جانب معلوم ہوا ہے کہ قندیل قتل کیس کا مدعی عظیم اپنے بیانات سے منحرف ہو نا شروع ہو گیا ہے اور اس سلسلے میں گزشتہ روز آر پی او آفس میں ایک میٹنگ ہوئی جس میں پولیس کے لیگل ایڈوائیزرنے پولیس کو آگاہ کیا ہے کہ اگر کیس کا مدعی اپنے بیان میں ملزم کو معاف کر دے گا تو یہ کیس ختم ہو جائے گا کیونکہ کیس میں گواہان موجود نہیں ہیں اور ملزم پہلی پیشی میں ہی بری ہو جائیں گے کیونکہ اس کیس کا مدعی ملزمان کا حقیقی والد ہے جبکہ ہلاک ہونے والی اس کی سوتیلی بیٹی ہے اور اس کی ہمدردیاں اپنے حقیقی بیٹوں کے ساتھ ہوں گی جس بنا پر پولیس دوبارہ سر جوڑ کر بیٹھ گئی ہے مگر کیس اس قدر کمزور ہے کہ پولیس اس میں ملزمان کو سزا دلوانے میں کامیاب نہیں ہو سکتی یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ اس وقت قندیل قتل کیس میں پولیس کی حراست میں بارہ افراد ہیں جن میں سے صرف دو کو عدالت میں پیش کیا گیا جبکہ باقی دس افراد پولیس نے اسی کیس میں مختلف مقامات پر حراست میں رکھے ہوئے ہیں جن کا تعلق کسی نہ کسی طرح قندیل قتل کیس سے جڑا ہوا ہے۔

مزید : ملتان