کسان بورڈ لاہورکا مطالبات تسلیم نہ کرنے پرحکومت کیخلاف احتجاج کا اعلان

کسان بورڈ لاہورکا مطالبات تسلیم نہ کرنے پرحکومت کیخلاف احتجاج کا اعلان

لاہور(کامرس رپورٹر)کسان بورڈ لاہور نے مطالبات تسلیم نہ کرنے کی صورت میں حکومت کے خلاف احتجاج کا اعلان کر دیا کسان بورڈ لاہور کے صدر میاں رشید منہالہ اور جنرل سیکرٹری سردار عرفان اللہ پڈھانہ نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کاشتکاروں کو فی الفور شوگرملز مالکان سے ان کی رقوم دلوائی جائیں اور سی پی آر کو چیک کا درجہ دیا جائے زرعی مداخل پر جی ایس ٹی اور ہر قسم کا ٹیکس ختم کیا جائے زرعی ٹیوب ویلوں پر مرحلہ وار بجلی مفت فراہم کی جائے اور اور بلنگ کا خاتمہ کیا جائے اور بقایا جات ختم کیے جائیں ہر فصل کی کاشت سے پہلے اس کی امدادی قیمت کا اعلان کیا جائے زرعی قرضہ جات پر سود کو ختم کیا جائے حکومت نے زراعت کو ڈی سی اوز کے ماتحت کر کے اس محکمہ کی خود مختاری صلب کر لی ہے محکمہ زراعت پیشہ ور زرعی ماہرین پر مشتمل ہے اور ہر سطح پر اسے زرعی سائنسدان چلاتے ہیں غیر ہنرمند افراد کے ہاتھوں سونپ کر حکومت سیاسی مقاصد حاصل کرنا چاہتے ہیں چاول کی بیرون ملک مارکیٹ پر اس وقت انڈیا نے قبضہ جما رکھا ہے ملکی چاول کی پیداوار کا بیشتر حصہ برآمد کیا جاتا ہے اس وقت لاکھوں ٹن چاول ملک میں پڑا ہے چاول کی فصل پر بہت زیادہ خرچ آتا ہے حکومت کو چاہیے کہ چاول کی ہائبرڈ اقسام متعارف کرائے پٹواریوں سے نجات کے حکومتی دعوے ناکام ہو گئے ہیں ۔

کمپوٹرائزڈ لینڈ ریکارڈ کا سسٹم اکثر خراب رہنے رشوت خوری سے کسان شدید مشکلات کا شکار ہیں آبپاشی اور بجلی کے لئے چھوٹے اور بڑے ڈیم بنائے جائیں 7 مارچ 2012 کو وزارت تجارت کے نوٹیفکیشن کو منسوخ کیا جائے اگر کسانوں کے مطالبات تسلیم نہ کے گئے تو کاشتکار ہر سطح پر حکومت کے خلاف احتجاج کرنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

مزید : کامرس