پیپلز پارٹی انسانی حقوق ونگ لاہور کے زیر اہتمام 8 اگست سانحہ کوئٹہ کی یاد میں اجلاس

پیپلز پارٹی انسانی حقوق ونگ لاہور کے زیر اہتمام 8 اگست سانحہ کوئٹہ کی یاد میں ...

لاہور(نمائندہ خصوصی)پاکستان پیپلز پارٹی انسانی حقوق ونگ لاہور کے رہنماء حسن ایوب نقوی کی رہائش گا ہ پر 8 اگست سانحہ کوئٹہ کی یاد میں اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے لاہور کے رہنماء نصیرا حمد ، عبدالکریم میو، حمزہ شیخ، اختر شاہ، ابو ہاشمی، وقاص پرنس، رانا محمد منیر ، محبوب احمد نے کہا کہ 8 اگست کو کوئٹہ میں دہشت گردی کے واقعہ نے قوم کو ہلا کر رکھ تھا بے گناہ وکلاء کو خون میں نہلا کر شہید کر دیا گیا وفاقی حکومت نے اس واقعہ کو ٹیسٹ کیس بنا کر دہشت گردی ختم کرنے کی زرا برابر کوشش نہیں کی نیشنل ایکشن پلان کی کسی شق پر عمل درآمد نہیں کیا گیا ۔

پاک فوج نے ردالفساد اور ضرب عضب کے ذریعے جتنی کامیابیاں حاصل کی ہیں خد شہ پیدا ہو گیا ہے کہ انھیں سیاسی محاذ پر ضیائع کر دیا جائے گا دہشت گردی کے خلاف نام نہاد کوشوں کا بھانڈا جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی رپورٹ میں پھوڑ دیا ہے حکومت کے تمام وزراء اور مشیر دہشت گردی کے خاتمے کی بجائے شریف خاندان کو کرپشن سے بچانے کے لیے لگے ہوئے ہیں دہشت گرد اپنے مذموم مقاصد کو حاصل کرنے کے لیے قانونی نافذ کرنے والوں اور بے گناہ شہریوں کو نشانہ بنا رہے ہیں سابق وزیرا عظم، وزیر اعلیٰ پنجاب ،اسپیکر قومی اسمبلی کا شہرلاہور دہشت گردوں کے ہاتھوں یرغمال بن چکا ہے ایک ماہ میں دہشت گردی کے دو واقعات نے حکومتی عزائم کا پردہ چاک کر دیا ہے۔ حکومت نیشنل ایکشن پلان کے ذریعے دہشت گردی ختم کرنے کے لیے تیار نہیں ہے سانحہ کوئٹہ کے بعد لا تعداد دہشت گردی کے واقعات ہوئے ہیں لیکن حکومت کے کانوں پر جوں نہیں رینگی لاہور میں دہشت گردی کی دوسری بڑی واردات سے ثابت ہو چکا ہے دہشت گرد جب چاہے دہشت گردی کی واردات باآسانی کر سکتے ہیں۔تین دن سے بارود سے بھرے ٹرک کو لاہور میں داخل ہونے سے نہ روکنے اور اس کو چیک نہ کرنے کی حکومتی نا اہلی کی کھلی مثال ہے۔انہون نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ حکومت سانحہ کوئٹہ پر بننے والی جسٹس فائز عیسیٰ کی رپورٹ اور نیشنل ایکشن پلان پر عمل درآمد کرتے ہوئے دہشت گردی کے خلاف اپنی کوششیں کریں۔

مزید : میٹروپولیٹن 4