کے یو جے (دستور)کا کرائم رپورٹنگ کے عنوان سے ورکشاپ کاانعقاد

کے یو جے (دستور)کا کرائم رپورٹنگ کے عنوان سے ورکشاپ کاانعقاد

کراچی (اسٹاف رپورٹر) کراچی یونین آف جرنلسٹس (دستور) نے سینٹر فار ایکسی لینس ان جرنلزم آئی بی اے کے اشتراک سے منگل کو ’’کرائم رپورٹنگ‘‘ کے عنوان سے ورکشاپ کا انعقاد کیا جس میں کرائم رپورٹنگ کے حوالے سے قواعد و ضوابط ،اخلاقیات اور دیگر موضوعات کا احاطہ کیا گیا ۔ورکشاپ سے آئی بی اے کے ڈائریکٹر کمال صدیقی ،کے یو جے (دستور)کے صدر افضال محسن ،سینئر صحافی افضل ندیم ڈوگر ،رضا حسن،سی ٹی ڈی کے انچارج راجہ عمر خطاب ،حامد الرحمن ،ثاقب صغیر اور دیگر نے خطاب کیا ۔کمال صدیقی نے کہا کہ عام شہریوں کو اس بات کا علم نہیں ہوتا ہے کہ کیا صحیح ہے اور کیا غلط ہے ۔ہر کام کے کچھ قواعد و ضوابط ہوتے ہیں ۔جرائم کی رپورٹنگ غیر جانبدارانہ انداز میں کرنی چاہیے ۔ذاتی مفادات کو پس پشت ڈال کر اصل حقائق کو لوگوں کے سامنے لانا صحافیوں کی بنیادی ذمہ داری ہے ۔خبر کے حصول کا ذریعہ بننے والی شخصیات کو اپنا دوست نہ سمجھا جائے کیونکہ آپ کا ان سے ایک پیشہ وارانہ تعلق ہے ۔اگر ان تعلقات کو ذاتی بنالیا جائے گا تو آپ اپنے شعبے کا حق ادا نہیں کرسکیں گے ۔انہوں نے کہا کہ فرقہ واریت ،مذہبی منافرت ،رنگ و نسل اور لسانیت کو خبروں میں اجاگر نہ کیا جاے اس سے معاشرہ تقسیم کی طرف چلاجاتا ہے ۔اس ضمن میں انتہائی احتیاط کی ضرورت ہے ۔صحافی کا کام ہے کہ وہ جو دیکھے وہ رپورٹ کردے ۔سینسر کرنا ایک رپورٹر کا کام نہیں ہے ۔افضل ندیم ڈوگر نے اپنے خطاب میں کہا کہ صحافیوں کو چاہیے کہ وہ اداروں کے ترجمان نہ بنیں بلکہ عوام کے مفاد میں رپورٹنگ کریں ۔صحافیوں کا کام معاشرے کی برائیوں کو اجاگر کرنا ہے ۔احتساب کا عمل اپنے آپ سے شروع کرنا چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ رپورٹرز کے لیے وقت کی پابندی اور فیلڈ میں جانے سے پہلے خبروں سے آگاہی ضروری ہے ۔جرائم سے متعلق رپورٹنگ کے لیے ایمانداری ،اچھا رویہ ،سچائی اور ذمہ داری اہم جزو ہیں ۔رضا حسن نے کہا کہ کرائم رپورٹنگ دوسری رپورٹنگ سے بہت مختلف ہے ۔اس میں خطرات بہت زیادہ ہیں ۔کرائم رپورٹرز کے لیے ضروری ہے کہ وہ جائے واردات پہنچے اور اپنے تمام ذرائع کو استعمال کرتے ہوئے خبر کی تصدیق کرے اور اس کے بعد اسے شائع یا نشر کرے ۔انچارج سی ٹی ڈی راجہ عمر خطاب نے کہا کہ پولیس اور صحافیوں کا چولی دامن کا ساتھ ہے ۔کئی واقعات میں پولیس سے پہلے میڈیا کے نمائندے پہنچ جاتے ہیں ۔رپورٹرز کو چاہیے کہ وہ خبر دیتے ہوئے جلد بازی کا مظاہرہ نہ کریں اس سے واقعہ کی تفتیش پر اثر پڑتا ہے ۔ صحافیوں کو چاہیے کہ وہ جب کسی کرائم سین پر پہنچیں تو اپنے حفاظتی اقدامات کو یقینی بنائیں ۔انہوں نے کہا کہ تفتیشی مراحل کے دوران بہت سی چیزیں ایسی ہوتی ہیں جن کے بارے میں میڈیا کو آگاہ نہیں کیا جاتا ہے لیکن صحافی ذرائع کے حوالے سے رپورٹس نشر کردیتے ہیں جس سے تحقیقات پر اثر پڑتا ہے ۔سینٹر فار ایکسی لینس ان جرنلزم آئی بی اے کی نمائندہ حرا صدیقی نے کہا کہ فرقہ واریت کی بیخ کنی کے لیے سوچ میں تبدیلی لانا انتہائی ضروری ہے ۔رپورٹرز کو چاہیے کہ وہ تحقیقاتی رپورٹنگ پر زیادہ توجہ دیں ۔ کے یو جے (دستور) کے صدر افضال محسن نے آئی بی اے اور شرکاء کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے ورکشاپس کے انعقادسے صحافیوں کو اپنی پیشہ وارانہ فرائض کی انجام دہی کے حوالے سے اہم آگاہی حاصل ہوتی ہے ۔کے یو جے (دستور)مستقبل میں بھی اس طرح کی ورکشاپس کا انعقاد کرتا رہے گا ۔ورکشاپ کے اختتام پر صحافیوں میں سرٹیفکیٹس تقسیم کیے گئے ۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر