پیپلزپارٹی دوراہے پر

پیپلزپارٹی دوراہے پر
پیپلزپارٹی دوراہے پر

  

ملک کے سیاسی تھیٹر میں پہلی بار حکومت سازی کے مراحل کو جس غیر روایتی انداز میں نمٹایا گیا،ماضی میں اس کی مثال نہیں ملتی،صرف بی این پی(ایم) کے اختر مینگل کے گستاخانہ انکار کے سوا،جن آزاد اراکین اور چھوٹی جماعتوں کی حمایت درکار تھی انہیں باری باری بنی گالہ میں متوقع وزیراعظم کے سامنے پیش کرکے حمایت وصول کرائی گئی،دلچسپ امر یہ ہے کہ ماضی میں نوازشریف اور آصف زرداری سمیت جس کسی کو بھی ایم کیو ایم کی حمایت چاہیے ہوتی انہیں نائن زیرہ کی یاترہ ضرورکرنا پڑتی، لیکن اس بار ایم کیو ایم کے وفد نے بنی گالہ پہنچ کے اپنے چھ ممبران اسمبلی عمران کے سپرد کر کے تبدیلی کی میتّھ (Myth)کو سند توثیق عطا کر دی۔انہی غیر روایتی تغیرات کے جَلُو میں عمران خان ملک کے بائیس ویں وزیر اعظم کے طور پرحلف اٹھالیں گے، اپوزیشن اگرچہ توقع کر رہی تھی کہ پارلیمنٹ میں سادہ اکثریت سے بھی کم ووٹ رکھنے والے عمران کمزور پرائم منسٹر ہوں گے، لیکن حالات کے تیور بتاتے ہیں کہ وہ عددی طور پر کمزور حکومت کے طاقتور وزیر اعظم ثابت ہو سکتے ہیں۔انتخابی دھاندلیوں پروسیع تر اتفاق رائے کے باوجود اپوزیشن جماعتیں تاحال کسی فیصلہ کن راہ عمل پر اتفاق رائے تک پہنچنے میں کامیاب نہیں ہو رہیں،کوشش بسیار کے باوجود مولانا فضل الرحمن پیپلزپارٹی کے چیئرمین آصف علی زرداری اور بلاول بھٹوکو اپوزیشن کے کسی اجلاس میں شرکت پر آمادہ نہیں کر سکے۔منی لانڈرنگ اور بدعنوانی کے نئے مقدمات جس طرح زرداری خاندان کے تعاقب میں ہیں،اس سے تو یہی لگتا ہے کہ اس طویل اور صبر آزما سفر میں پیپلزپارٹی کی اعلیٰ قیادت زیادہ دیر تک اپوزیشن کا ساتھ نہیں دے پائے گی۔

جی ڈی اے کی نصرت سحر عباسی کہتی ہیں،سندھ حکومت پیپلزپارٹی کو پلیٹ میں رکھ کے پیش کی گئی، لاریب، پیپلزپارٹی اس نئے بندوبست کی دوسری بڑی بینیفشری جماعت بن کے ابھری ہے اور سچ تو یہی ہے کہ غیر معمولی مراعات اور مراتب جلیل کے کھو جانے کا خوف جرات کے نشتر کو کند کرکے انسان کو بغاوت اولو العزمی کے جذبات سے محروم کردیتا ہے۔ہر چند، پیپلزپارٹی کی اجتماعی خواہش تو اپوزیش کے ارادوں سے ہم آہنگ رہے گی، لیکن آصف علی زرداری،جو اپنی پارٹی کی قیادت سے زیادہ پڑوسی کی رائے کو وقعت دیتے ہیں،ہمیشہ کی طرح پُرامن بقائے باہمی میں عافیت تلاش کریں گے، چنانچہ غالب امکان یہی ہے کہ گردش ایام سے استفادہ کرنے کے فن میں مہارت رکھنے والوں کے لئے اپوزیشن کی وادی پُرخار میں بسیرا مشکل ہو جائے گا،کیا زرداری کی پیپلزپارٹی، تحریک انصاف حکومت کے خلاف اپوزیشن کی مزاحمتی تحریک کا حصہ بن پائے گی؟مولانا مودودیؒ کہتے ہیں کہ ’’کسی بھی فرد یا جماعت کے لئے اس نظام سے لڑنا ممکن نہیں ہوتا، جس سے وہ مفاد حاصل کر رہے ہوں‘‘۔ ایک سوال یہ بھی ہے کہ عمران خان جیسے قطعیت کے ساتھ بات کرنے والے مثالیت پسند انسان کے لئے دوام اقتدار کی خاطر قدم قدم پر سمجھوتوں اور پراگندہ خیال جماعتوں کو ساتھ لیکر چلنا کیسے ممکن ہو گا؟ابھی کل ہی کی بات ہے،خیبر پختون خوا،میں کم نشستوں کے باعث پی ٹی آئی نے چھوٹی جماعتوں کے اشتراک سے حکومت بنائی تھی،پانچ سالوں کے دوران وہاں عمران نے اپنی پہلی اتحادی جماعت، قومی وطن پارٹی کو دو بار گورنمنٹ سے نکال باہر کیا،وہ دل پر کوئی بوجھ لئے بغیر ناطہ توڑ دیتے ہیں، لیکن ایک نیا رشتہ جوڑنے کیلئے ہر وقت تیار بھی رہتے ہیں۔

تعلیمی نظام میں اصلاحات اور خیبربنک کے معاملات پر جماعت اسلامی کے ساتھ چار سال تک رسہ کشی جاری رکھی،جماعت بھی آخری دنوں میں پی ٹی آئی کا ساتھ چھوڑ گئی تھی،یہ تو پرویز خٹک جیسے جہاں دیدہ اور تجربہ کار وزیراعلیٰ تھے، جنہوں نے کمال مہارت سے اتحادی اور اپوزیشن جماعتوں کو انگیج رکھنے کے علاوہ ڈلیور بھی کیا جس کے نتیجہ میں پی ٹی آئی دوسری بار دوتہائی اکثریت کے ساتھ خیبرپختون خوا کی بڑی قوت بن کے ابھری ہے۔ہو سکتا ہے کہ ابتدائی مراحل میں عمران کو ریاستی ڈھانچے میں کارفرما طاقتور اداروں کی مشروط حمایت حاصل رہے اور عالمی برادری خاص طور پر مغربی دنیا بھی ایک لبرل اور روشن خیال لیڈر کو مناسب تعاون دیکر کامیاب بنانے کی کوشش کرے، لیکن سسٹم کو تو لامحالہ انہیں خود ہی چلانا پڑے گا،اگر انہوں نے ذہنی لچک کا مظاہرہ کرتے ہوئے متضاد قوتوں کے تال میل سے خود طاقت کا توازن قائم نہ کیا تو یہ موافق ماحول زیادہ دیر تک برقرار نہیں رہ سکے گا،بظاہر ایسا لگتا ہے کہ اپوزیشن کے خلاف عمران کا جارحا نہ رویہ سیاسی اضطراب کو بڑھانے کا سبب بنے گا،پیپلزپارٹی اور نوازشریف کو سیاسی سمجھوتوں تک لانے کی خاطر بد عنوانی کے الزامات کے تحت سزائیں دلوا کے دیوار سے لگانے کی حکمت عملی جلد یا بدیر سیاسی محاذ آرائی کو تصادم کی سطح تک پر لے جانے کے اسباب مہیا کر دے گی،تاہم بعض تجزیہ کاروں کا خیال ہے، کامیابی کے بعد عمران جارحانہ روش ترک کرکے سیاسی ماحول کو نارمل بنالیں گے، بلاشبہ ہماری سیاست کے افسانہ میں رنگ بھرنے والے ارباب بست وکشادکی ذرا سی کسر نفسی اور تھوڑی سی دیانت انہیں اس بات کا یقین دلانے کے لئے کافی ہو گی کہ زندگی کا تنّوع اور اس کائنات کی بوقلمونی ہمارے محدود اذہان کے احاط سے باہر ہے۔

خوش آئند امر یہ ہے کہ اپوزیشن جماعتیں حکومت کے خلاف محتاط طرز عمل اختیار کرنے کا اشارہ دے چکی ہیں،یوں لگتا ہے کہ وہ عمران کو وعدوں کی تکمیل اور اپنی صلاحیتون کو آزمانے کا موقع دینے کو تیار ہیں۔البتہ خود ستائی کے خُوگر آصف زرداری کی بے رحم خاموشی نہایت معنی خیز ہے،ان کی جماعت ’’پائے رفتن نہ جائے ماندن‘‘جیسی کیفیت سے دوچار نظر آتی ہے،اگر پیپلز پارٹی نے نواز لیگ کی قیادت میں منظم ہونے والی اپوزیشن سے الگ ہو کے تحریک انصاف کے ساتھ خفیہ یا ظاہرہ تعاون کی راہ چن لی تو وہ جمہوری حلقوں میں اپنی ساکھ گنوا بیٹھے گی اور اگر وہ اپوزیشن کے ساتھ مل کر چلنے کی راہ عمل اختیار کر ے گی تو آصف علی زرادری اور اس کی بہن فریال تالپور سمیت کئی پارٹی رہنماوں کو منی لانڈرنگ اور بد عنوانی کے درجنوں مقدمات کا سامنا کرنا پڑے گا، جس سے زرداری کو ذاتی اور پارٹی کو سیاسی طور پرناقابل تلافی نقصان ہو گا،چنانچہ پیپلزپارٹی ایسے دو راہے پر آ کھڑی ہے،جہاں فیصلہ کن سیاسی کشمکش کے دوران جمہوریت کے تقاضے انہیں اپوزیش کے کارواں میں شمولیت کی طرف کھینچ رہے ہیں،لیکن بقاء کی آزمائش انہیں مقتدرہ کے دائیں جانب رہنے پر مجبور کرتی ہے۔ لاریب،کچھ لوگ صحیح راستے پر چلنے کے وہم میں بھٹک جاتے ہیں،ان لوگوں کے الفاط کتنے ٹھیک ہوتے ہیں جو کوئی احمقانہ دعوی نہیں کرتے۔وقت کے ساتھ اپوزیشن کا اتحاد بھی اپنی ہیت ترکیبی بدلتا رہے گا،مذہبی جماعتیں فی الحال تو انتخابی شکست کے صدمے کے باعث اپوزیشن کی تلخ نوائی سے کچھ سکون پا لیتی ہیں،تاہم بالآخرانہیں بھی اپنی راہیں سیکولر اور نیم سیکولر جماعتوں سے الگ کرنا پڑیں گی۔

اس پوری جدلیات کا حیرت انگیز نقطہ یہ ہے کہ عمران خان،جن کی سیاسی اٹھان اسلامی نعروں کی گونج سے ممکن ہوئی اور جماعت اسلامی کی ذیلی تنظیم پاسبان کی سٹریٹ پاور نے انہیں کندھا فراہم کر کے میدان سیاست میں اتارا، مگر ان کی کامیابی مذہبی سیاست کے دروازے مقفل کرنے پر منتج ہوئی،انہوں نے اپنی سیاسی زندگی کی ابتداء دائیں بازو کے روایتی خیالات سے کی، لیکن بائیس سالہ سیاسی سفر کے دوران رفتہ رفتہ انہوں نے خیبر پختون خوا میں مذہبی جماعتوں اور پنجاب میں پیپلزپارٹی کے نظریاتی ووٹ کو اپنا ہم نوا بنا کے دو متضاد خیال طبقات کو اپنی کشتی میں سوارکر لیا لیکن معلوم نہیں،ان کی منزل کہاں ہو گی؟

مزید : رائے /کالم