پلڈاٹ نے عام انتخابات کے معیار پر رپورٹ جاری کردی،مجموعی طور پرانتخابات2018 کا معیار 2013 سے 5 فیصد کم تھا

پلڈاٹ نے عام انتخابات کے معیار پر رپورٹ جاری کردی،مجموعی طور پرانتخابات2018 ...
پلڈاٹ نے عام انتخابات کے معیار پر رپورٹ جاری کردی،مجموعی طور پرانتخابات2018 کا معیار 2013 سے 5 فیصد کم تھا

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)پلڈاٹ نے عام انتخابات کے معیار پر رپورٹ جاری کردی جس میں پلڈاٹ نے انتخابات 2018 کے کمزور پہلووں سے متعلق تحقیقات کی سفارش کردی۔

رپورٹ کے مطابق پلڈاٹ نے انتخابات 2018 کے چار بڑے پہلووں کا جائزہ لیا،قبل از وقت انتخابات کا عمل اور الیکشن کے دن کا جائزہ لیا گیا،ووٹوں کی گنتی، رزلٹ کی تیاری، حوالگی اور انتخابات کے بعد کا مرحلہ دیکھا گیا،پلڈاٹ نے یہ جائزہ گزشتہ تین انتخابات میں بھی اسی طرح لیاتھا،2002 کے انتخابات کا معیار 37 فیصد تھا،2008 کے انتخابات کا معیار کچھ بہتری کے ساتھ 40 فیصد ہوا،2013 کے انتخابات کا معیار بڑھ کر 56.76 فیصد ہواجبکہ 2018 میں انتخابات کا معیار گر کر51.79 فیصد پر آگیا۔

پلڈاٹ رپورٹ کے مطابق الیکشن 2018 کے دن کچھ بہتری دیکھنے کو ملی،پولنگ ڈے کے تمام انتظامات کے معیارکو64 فیصد نمبرز دیے گئے جبکہ2013 میں پولنگ ڈے کا معیار44 فیصد نمبر حاصل کرسکا تھااس طرح 2013 کے مقابلے میں 2018 میں پولنگ ڈے کچھ بہتر تھا۔پولنگ ڈے پر انتخابی عملے اور سیکیورٹی اہلکاروں کا رویہ قابل تعریف ہے،2018 میں بہتری کی ایک وجہ الیکشن کمیشن کا وقت سے پہلے ہی تیاری کا عمل شروع کرنا تھا،الیکشن 2018 میں پولنگ مینجمنٹ نے سب سے زیادہ شکایات وصول کیں،ووٹوں کی گنتی اور رزلٹ کی تیاری انتخابات2018 کا کمزور ترین پہلو تھا،ووٹوں کی گنتی،نتائج کی تیاری اور حوالگی کا عمل پست ترین، 40 فیصد اسکور حاصل کرسکاجبکہ مجموعی طور پرانتخابات2018 کا معیار 2013 سے 5 فیصد کم تھا،2018کے انتخابات51 فیصد اسکورحاصل کرسکے، 2013 کے انتخابات کا اسکور56 فیصد تھا،قبل از انتخابات 2018 کے انتخابی عمل کو 50 فیصد اسکور مل سکااوربعد از انتخاب کا عمل کا اسکور بھی 50 فیصد ہی رہا۔

مزید : قومی /سیاست /علاقائی /اسلام آباد