پاکستان کو سلامتی کونسل میں جانے سے پہلے کیا ضروری کام کرنا چاہئے ؟ سابق نگران وزیر اعلیٰ پنجاب نے بتادیا

پاکستان کو سلامتی کونسل میں جانے سے پہلے کیا ضروری کام کرنا چاہئے ؟ سابق ...
پاکستان کو سلامتی کونسل میں جانے سے پہلے کیا ضروری کام کرنا چاہئے ؟ سابق نگران وزیر اعلیٰ پنجاب نے بتادیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) سابق نگران وزیر اعلیٰ پنجاب ڈاکٹر حسن عسکری نے کہاہے کہ مقبوضہ کشمیر کے معاملے پر سلامتی کونسل میں جانے سے پہلے روس سے بھی بات کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ کشمیر کے مسئلے پر اگر اب تک کسی نے ویٹو کیاہے تو وہ روس نے کیاہے ۔

دنیا نیوز کے پروگرام ”تھنک ٹینک“میں گفتگو کرتے ہوئے ڈاکٹر حسن عسکری نے کہا کہ پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے یہ بالکل واضح ہوگیاہے کہ حکومت اور اپوزیشن میں کوئی اتفاق رائے موجود نہیں ہے ، یہ جو تقریریں کی گئی ہیں ، یہ صرف زبانی جمع خرچ ہیں ، داخلی صورتحال ٹھیک نہیں ہے ۔انہوں نے کہا کہ اس وقت سب سے اہم چیز کشمیریوں کا اپنا ری ایکشن ہے کہ جب کرفیو اٹھتاہے تو کشمیریوں کا اپنا ردعمل کیا ہوگا ؟ یہ بات عالمی سطح پر اثر ڈالے گی ، آیا کہ کشمیر ی بھارت کی جانب سے کئے گئے اس قدام کے خلاف مزاحمت کرتے ہیں یا اس کوقبول کرتے ہیں ، اگر یہ ردعمل کمزور ہوا تو یہ معاملہ ادھر ادھر ہوجائیگا ۔

حسن عسکری کا کہنا تھا کہ اس معاملے پر روس سے بھی بات کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ کشمیر کے مسئلے پر اگر اب تک کسی نے ویٹو کیاہے تو وہ روس نے کیاہے ۔ اس لئے ان لوگوں سے بات کرنے کی ضرورت ہے ، اگر تو سپورٹ حاصل ہوجاتی ہے تو پھر ہم سلامتی کونسل میں جاسکتے ہیں ، کشمیر کا مسئلہ ایک دوہفتے میں حل ہونیوالا نہیں ، انڈیا اپنے سے اقدام کو فوری واپس نہیں لے گا ، اس لئے ایک طویل المیعاد پالیسی بنانے کی ضرورت ہے ۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -