گوگل میپ کے سہارے چلنے والی فیملی گاڑی سمیت نہر میں جاگری

گوگل میپ کے سہارے چلنے والی فیملی گاڑی سمیت نہر میں جاگری
گوگل میپ کے سہارے چلنے والی فیملی گاڑی سمیت نہر میں جاگری

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) گوگل میپس نے دنیا بھر میں لوگوں کی زندگی آسان کر دی ہے،اس کے ذریعے لوگ بغیر کسی شخص سے پتا پوچھے ایسے علاقوں کا سفر بھی باآسانی کر لیتے ہیں جہاں وہ زندگی میں پہلے کبھی نہیں گئے۔ تاہم بسااوقات گوگل میپس کسی کے لیے مشکل کا سبب بھی بن سکتا ہے، جس کی ایک مثال گزشتہ دنوں بھارت میں سامنے آئی ہے جہاں ایک فیملی گوگل میپس کے بھروسے سفر کررہی تھی کہ ان کی گاڑی نہر میں گر گئی۔

انڈیا ٹائمز کے مطابق یہ واقعہ ریاست کیرالا میں پیش آیا۔ گوگل میپس راستہ صاف دکھا رہا تھا حالانکہ سڑک پر آگے نہر تھی اور اس پر پل بھی نہیں تھا۔ بتایا گیا ہے کہ نہر کا پل حالیہ سیلاب کی وجہ سے ٹوٹ گیا تھا اوراب بھی علاقے میں سیلابی صورتحال تھی۔ اس گاڑی میں ڈاکٹر سونیا نامی خاتون اپنے تین بچوں، والدہ سوساما اور ایک رشتہ دار شخص انیش کے ہمراہ سفر کر رہی تھی۔

پیراچل کے علاقے کوٹایم کے قریب ان کی کار نہر میں جا گری۔ نہر میں پانی کا بہاﺅ اتنا تیز تھا کہ پانی گاڑی کو 300میٹر تک اپنے ساتھ بہا لے گیا۔ مقامی لوگوں نے رسے کی مدد سے گاڑی تک رسائی حاصل کی اور اس میںسوار فیملی کو باہر نکالا۔یوں یہ فیملی معجزانہ طور پر اس خوفناک حادثے میں بال بال بچ گئی۔

ڈاکٹر سونیا کا کہنا تھا کہ گوگل میپس انہیں یہ راستہ بالکل کلیئر دکھا رہا تھا، تاہم جب ہم اس جگہ پر پہنچے تو وہاں سیلابی صورتحال تھی۔ ہم خوش قسمت تھے کہ بچ گئے ورنہ سیلاب کا پانی ہمیں اور ہماری گاڑی کو اپنے ساتھ بہا لے چلا تھا۔میں لوگوں کو نصیحت کروں گی کہ موسم اور سیلاب جیسی قدرتی آفات کے حوالے سے گوگل میپس پر کبھی بھروسہ نہ کریں۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -