دہشت گردوں کا نیا ہتھیار ،مسافر جہازوں کے لیے بڑا خطرہ

دہشت گردوں کا نیا ہتھیار ،مسافر جہازوں کے لیے بڑا خطرہ
دہشت گردوں کا نیا ہتھیار ،مسافر جہازوں کے لیے بڑا خطرہ

  


لندن(نیوزڈیسک)ہوائی سفر بہت دلفریب ہوتا ہے اور اکثر لوگوں کے خیال میں یہ محفوظ بھی لیکن حال ہی میں کچھ بین الاقوامی اداروں نے اس خدشے کا اظہار کیا ہے کہ ہوائی جہازوں کو دہشت گرد اغواءکرکے اپنے مذموم مقاصد کے لئے استعمال کر سکتے ہیں جبکہ ان کا مزید یہ بھی کہنا ہے کہ ڈرون کا بڑھتا ہوا استعمال بھی فضائی حادثات کو جنم دے سکتا ہے۔

مشہور جرمن انشورنس کمپنی Allianzکے عہدے داروں کا کہنا ہے کہ آنے والے دنوں میں دہشت گرد ہوائی جہازوں کو اپنے مقاصد کے لئے استعمال کر سکتے ہیں۔انشورنس انڈسٹری کا یہ بھی کہنا ہے کہ گذشتہ سالوں کی نسبت فضائی سفر انتہائی محفوظ ہو چکا ہے لیکن ان خطرات کی موجودگی میں انشورنس کی رقم میں بہت تیزی سے اضافہ ہو گیا ہے۔ ایک محتاط اندازے کے مطابق 1960ءکی دہائی میں ایک سو ملین افراد جو ہوائی سفر کرتے تھے میں حادثات میں ہلاک ہونے کا تنا سب 133تھا جو کہ اب کم ہوکر دو سے بھی کم ہوگیا ہے لیکن دہشت گردی اور دیگر خطرات کے پیش نظر انشورنس کی قیمت میں اضافہ ہو ا ہے ۔

جبکہ بین الاقوامی ائیر ٹرانسپورٹ اتھارٹی نے دہشت گردوں کی جانب سے ایوی ایشن انڈسٹری کے کمپیوٹرز ہیک کرنے کے خدشے کا اظہار کیا ہے اور کہا ہے کہ انڈسرٹری بہت زیادہ کمپیوٹر پر انحصار کرتی ہے اور اس بات کی اشد ضرورت ہے کہ کمپیوٹر ٹیکنالوجی کو بہتر سے بہتر بنایا جائے اور پائلٹس کو ہر قسم کے حالات کا مقابلہ کرنے کی تربیت دی جائے۔ اتھارٹی کا یہ بھی کہنا ہے کہ دنیا میں ڈرون ٹیکنالوجی کا استعمال بڑھا ہے لیکن انہیں اڑانے کے لئے بین الاقوامی قوانین نہ ہونے کے باعث یہ حادثات کی بڑی وجہ بن سکتے ہیں۔ لہذا ضرورت اس امر کی ہے کہ دہشت گردوں سے بچنے کے لئے اقدامات اٹھائے جائیں اور لوگوں کی زندگیوں کو محفوظ بنایا جائے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...