کشمیر کے الحاق سے بھارت کے سکیولرکردار کو استحکام ملا

کشمیر کے الحاق سے بھارت کے سکیولرکردار کو استحکام ملا

  



سرینگر(کے پی آئی)مقبوضہ کشمیر کی بھارت نواز جماعت پی ڈی پی سرپرست اعلی مفتی محمد سعید نے کہا ہے کہ کشمیرکے ہندوستان کے ساتھ الحاق نے ملک کے سیکولر کردار کو مزیداستحکام بخشا تھا اور جموں کشمیر کے خصوصی درجہ کے ساتھ کسی بھی قسم کی چھیڑ چھاڑ کی کوشش ہندوستان کے سماجی تا نے بانے کو تہس نہس کرنے کے مترادف ہوگا۔ چرار شریف، بڈگام اور چاڈورہ میں انتخابی جلسوں سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جموں کشمیر اپنی تاریخ کے انتہائی نازک موڑ پر کھڑا ہے اور جاری اسمبلی انتخابات میں اگر پی ڈی پی کو واضح منڈیٹ ملتا ہے تو مسئلہ کشمیر کے حل نیز خطہ میں دائمی امن کے قیام کے لئے راہ ہموار ہو سکتی ہے ۔ مفتی نے بتایا کہ ملک میں کچھ طاقتیں جموں کشمیر کو ایک قلعہ کے طور پر، اپنی نظریاتی تسکین یا سیاسی مقاصد کیلئے فتح کرنے کیلئے تمام حربے آزما رہی ہیں۔تاہم انہوں نے متنبہ کیا کہ جموں کشمیر کے تکثریتی کردار یا خصوصی درجہ کے ساتھ کھلواڑ کرنے کی کوششوں کے بھیانک نتائج برآمد ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ جموں کشمیر ملک کی واحد مسلم اکثریتی ریاست ہونے کی وجہ سے ہندوستان بین الاقوامی سطح پر ایک منفرد مقام رکھتا ہے اور جو عناصر اس کے تشخص کو زک پہنچانے کی مذموم سازشیں کر رہے ہیں وہ نہ تو ریاست اور نہ ہی ملک کے مفادمیں ہے ۔

مفتی سعید نے کہا کہ ریاست کے تمام خطوں اور علاقوں کے لوگ پی ڈی پی میں اعتماد ظاہر کر رہے اور وہ اس جماعت کو محض ایک سیاسی متبادل ہی نہیں بلکہ بدلاؤ کا ایک پلیٹ فارم اور اپنے مسائل کے ازالہ کیلئے وسیلہ تصور کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر چہ ریاست کے مختلف طبقات کی امنگیں جدا جدا ہیں لیکن سبھی امن اور ترقی کے خواہاں ہیں ، بیروزگاری کا خاتمہ اور خوشحالی سبھی کی مشترک تمنا ہے ، اور بتایا کہ اگر پارٹی اقتدار میں آتی ہے تو ریاست کے تشخص کا تحفظ، امن عمل کی بحالی، ہمہ گیر ترقی یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ ریاست کو سیاسی اور اقتصادی غیر یقینی سے باہر نکالنا پارٹی کی ترجیحات میں سر فہرست ہوگا۔ مفتی نے کہا کہ پچھلی سات دہائیوں سے ریاست کو جس سیاسی عدم استحکام کا سامنا رہا ہے اس کا یہاں کے عوام کو بھاری خمیازہ بھگتنا پڑا، معاشی بد حالی، انسانی وسائل کا استحصال انتہائی حدوں کو چھو رہا ہے ایسے میں بعض عناصر کی طرف سے ریاستی عوام کے لئے یہاں زمین تنگ کرنا خطرناک نتائج کا حامل ہو سکتا ہے اس لئے اس مسئلہ کاصبرو تحمل،سوجھ بوجھ اور متحد ہو کر جمہوری طریقہ سے اپنا حق استعمال کر کے مقابلہ کرنا ہوگا۔ انہوں نے بتایا کہ پارٹی انسانی وسائل بالخصوص نوجوان نسل کی صلاحیتوں کو بروئے کار لانے کے لئے ایک قابل عمل حکمت عملی طے کر رہی ہے تا کہ ان کے لئے ریاست میں با معنی روزگار کے مواقع فراہم ہوں اور اگر پارٹی کو اگلی حکومت تشکیل دینے کا موقع ملتا ہے تو ضلع بڈگام میں تعمیر و ترقی کے ایک نئے دور کا آغاز ہوگا ۔ چرار شریف سے پارٹی امیدوار غلام نبی لون ہنجورہ، چاڈورہ کے امیدوار جاوید مصطفی میر اور بڈگام سے منتظر محی الدین کے علاوہ سینئر پارٹی لیڈڑان مولوی عابد انصاری، ڈاکٹر نذیر احمد، پی ڈی پی یوتھ لیڈر انجینئر نذیر احمد یتو، ڈاکٹر غضنفر اور شوکت احمد نے بھی ریلیوں سے خطاب کیا۔

مزید : عالمی منظر


loading...