سپریم کورٹ کا سندھ ،پنجاب میں بلدیاتی انتخابات ایک ماہ میں مکمل کرنیکا حکم

سپریم کورٹ کا سندھ ،پنجاب میں بلدیاتی انتخابات ایک ماہ میں مکمل کرنیکا حکم ...

  



                           اسلام آباد( مانیٹرنگ ڈیسک ، آن لائن ،اے این این)سپریم کورٹ نے سندھ اور پنجاب کو حلقہ بندیوں ،بلدیاتی انتخابات کے انتظامات ایک ماہ میں مکمل کیلئے ایک ماہ کی مہلت دیدی ،مزید سماعت 8جنوری تک ملتوی ۔ چیف جسٹس ناصرالملک کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے تین رکنی بینچ نے بلدیاتی انتخابات کیس کی سماعت کی ۔ الیکشن کمیشن کے وکیل اکرم شیخ نے عدالت میں موقف اختیار کیا کہ بلدیاتی انتخابات کے انعقاد میں تاخیر ہماری وجہ سے نہیں بلکہ سندھ اور پنجاب کی جانب کی جانب سے کی جارہی ہے ۔ حلقہ بندیوں اور بلدیاتی انتخابات سے متعلق سندھ اور پنجاب حکام کے ساتھ میٹنگ ہوئی ہے ۔ پنجاب نے لوکل گورنمنٹ قانون میں ترمیم ،لوکل ایریاز ، یونین کونسلز، وارڈز کے نوٹیفکیشن اور تصدیق شدہ نقشے پندرہ روز میں فراہم کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے ۔ سندھ نے یہ چیزیں تیس روز میں فراہم کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے ۔ چیف جسٹس ناصر الملک نے استفسار کیا اس کام کیلئے پنجاب نے 15 روز مانگے ہیں تو سندھ حکومت کو یہ کام مکمل کرنے کیلئے 30 روز کیوں چاہئیں، ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل سندھ شفیع چانڈیو نے عدالت کو بتایا کہ لوکل گورنمنٹ قانون میں ترمیم کا مسودہ تیار ہے ۔ الیکشن کمیشن سے حلقہ بندیوں کے سلسلے میں تعاون کیلئے کمیٹی بھی بنا دی ہے ۔ ترمیم شدہ قانون کا مسودہ پارلیمانی کمیٹی کے سامنے رکھا جائیگا، پھر صوبائی اسمبلی سے منظوری لی جائیگی ۔ اکرم شیخ نے عدالت کو بتایا کہ حلقہ بندیوں کے رولز کا مسودہ تیار کر لیا ہے۔ حلقہ بندیوں کے لئے درکار سازو سامان کی خریداری کیلئے کمیٹیاں بنا دی ہیں ۔ بلدیاتی الیکشن کے حوالے سے تاخیر ہماری طرف سے نہیں سندھ اور پنجاب کی جانب سے ہو رہی ہے ۔ ہم حلقہ بندیاں اور بلدیاتی انتخاب کرنے کیلئے پرعزم ہیں۔ عدالت عظمیٰ نے سندھ اور پنجاب کو حلقہ بندیوں اور بلدیاتی انتخابات کے تمام انتظامات ایک ماہ میں مکمل کرنے کا حکم دیتے ہوئے کیس کی سماعت آٹھ جنوری تک ملتوی کر دی۔

مزید : صفحہ اول


loading...