دس ہزار مردوں سے تعلقات کے بعد خاتون سے شادی کے ہزاروں خواہشمند سامنے آگئے

دس ہزار مردوں سے تعلقات کے بعد خاتون سے شادی کے ہزاروں خواہشمند سامنے آگئے
دس ہزار مردوں سے تعلقات کے بعد خاتون سے شادی کے ہزاروں خواہشمند سامنے آگئے

  



سڈنی (نیوز ڈیسک) کہتے ہیں کہ انسان کسی بھی وقت غلط راستہ چھوڑ کر صحیح راستے کا انتخاب کر لے تو یہ اس کے حق میں بہتر ہی ہوتا ہے اور یہ کبھی نہیں سمجھنا چاہیے کہ اب بہت دیر ہو گئی۔ آسٹریلوی دوشیزہ گوائنتھ مونٹی نیگرو اس کی واضح مثال ہیں۔ کوائنتھ نے 18 سال کی عمر میں ایک کلب میں اجتماعی زیادتی کا نشانہ بننے کے بعد اپنی غیر متوازن ذہنی کیفیت کے زیر اثر جسم فروشی کا کام شروع کر دیا۔

کنواری لڑکی کی انوکھی شادی,جاننے کے لئے کلک کریں

اس کالے دھندے میں پڑنے کے بعد دولت کے لالچ نے انہیں پوری طرح جکڑ لیا اور ان کی غیر معمولی خوبصورتی نے کبھی گاہکوں کی کمی نہ آنے دی۔ وہ عرصہ 12 سال تک شب و روز اسی کام میں مصروف رہیں اور ان کے گاہکوں میں مشہور وکلائ، ڈاکٹر اور بڑی بڑی کاروباری شخصیات شامل رہیں۔ گوائنتھ نے تین سال قبل اس کام سے توبہ کر لی اور دوسروں کی اصلاح کیلئے ایک کتاب بھی لکھی جس کا نام "10,000 Men" ہے۔ وہ بتاتی ہیں کہ 12 سال کے دوران انہوں نے 10,091 مردوںکو جسمانی خدمات فراہم کیں لیکن پھر انہیں احساس ہوا کہ سچا تعلق صرف ایک مرد سے ہی قائم ہو سکتا ہے اور اس کا بہترین طریقہ شادی ہے۔ جب میڈیا نے ان کا یہ عزم دنیو کو بتایا کہ وہ کسی ایک مرد سے شادی کرکے صاف ستھری زندگی گزارنا چاہتی ہیں تو دنیا بھر سے انہیں شادی کی پیشکشیں موصول ہونے لگیں۔ وہ بتاتی ہیں کہ محض چند ماہ کے دوران انہیں 1,000 سے زائد مرد شادی کی پیشکش کر چکے ہیں۔ وہ ان درخواستوں پر غور کر رہی ہیں تاکہ بہترین خاوند کا انتخاب کر سکیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ پر امید ہیں کہ ایک مرد سے شادی انہیں وہ خوشی دے سکے گی جو اس سے پہلے 10ہزار مرد نہ دے سکے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...