شامی حزب اختلاف کی ریاض اجلاس میں شرکت

شامی حزب اختلاف کی ریاض اجلاس میں شرکت

ریاض (کے پی آئی)شام کی اعتدال پسند حزب اختلاف کے مختلف گروپوں کی سرکردہ شخصیات سعودی عرب کے دارالحکومت الریاض میں شامی تنازعے کے حل کے لیے بات چیت کی ۔شامی حزب اختلاف کے رہنما الریاض میں بات چیت کے دوران شامی حکومت کے ساتھ مستقبل میں ہونے والے امن مذاکرات کے لیے کوئی مشترکہ لائحہ عمل ترتیب دینے کی کوشش کریں گے۔سعودی عرب کا کہنا ہے کہ وہ ان گروپوں کو آپس میں آزادانہ طریقے سے صلاح و مشورے اور بات چیت کے لیے ہر ممکن سہولت مہیا کرنے کو تیار ہے تاکہ وہ جنیوا اول سمجھوتے کے مطابق تنازعے کے حل کے لیے کسی ایک مشترکہ مقف پر متفق ہوجائیں۔جنیوا اول سمجھوتے پر 2012 میں منعقدہ امن کانفرنس کے دوران دستخط کیے گئے تھے۔اس میں شام میں عبوری حکومت کے قیام کے لیے لائحہ عمل وضع کیا گیا تھا۔اس شامی صدر بشارالاسد پر زوردیا گیا تھاکہ وہ ایک انتظامی کونسل کے حق میں فوری طور پر دستبردار ہوجائیں۔اس میں شامی حکومت اور حزب اختلاف کی شخصیات کو عبوری حکومت میں مساوی نمائندگی دینے کی تجویز پیش کی گئی تھی۔

ریاض مذاکرات میں شامی حزب اختلاف کے مختلف گروپوں پر مشتمل قریبا ایک سو شخصیات شرکت کررہی ہیں۔ان کا تعلق مغرب کے حمایت یافتہ شامی قومی اتحاد (ایس این سی)اور دمشق میں قائم قومی رابطہ کمیٹی برائے جمہوری تبدیلی (این سی سی)سے ہے۔

مزید : عالمی منظر