2016ء میں مسلمان یورپ پر چڑھ دوڑیں گے، نابینا خاتون کی پیشنگوئی

2016ء میں مسلمان یورپ پر چڑھ دوڑیں گے، نابینا خاتون کی پیشنگوئی
 2016ء میں مسلمان یورپ پر چڑھ دوڑیں گے، نابینا خاتون کی پیشنگوئی

  


صوفیہ (نیوز ڈیسک) سال 2016ء کا آغاز ہوا چاہتا ہے لیکن اس دفعہ یورپ میں نئے سال کے لئے جوش و خروش پہلے سا نہیں اور اس کی ایک وجہ تین دہائیاں قبل ایک نابینا کاہن خاتون کی طرف سے کی گئی پیشنگوئی ہے جس کے مطابق 2016ء یورپ پر مسلمانوں کی یلغار کا سال ہے۔بابا وانگا کے نام سے مشہور اس نابینا کاہن کو تمام یورپ میں بڑی اہمیت حاصل ہے کیونکہ اس کی متعدد پیشنگوئیاں پہلے ہی سچ ثابت ہوچکی ہیں۔ وانگا نے اپنی موت سے تقریباً 10سال قبل کی گئی پیشنگوئیوں میں واضح الفاظ میں کہا کہ 2010ء کے قریب ’بہار عرب‘ کا تلاتم برپا ہوگا جس کے بعد شام میں خانہ جنگی ہوگی اور پھر 2016ء میں یورپ پر مسلمانوں کی یلغار ہوجائے گی، جبکہ 2043ء تک ایک دفعہ پھر مسلم خلافت قائم ہوجائے گی، جس کا مرکز اطالوی شہر روم ہوگا۔2016ء کے بارے میں کی گئی وانگا کی پیشنگوئی کے الفاظ کچھ یوں ہیں، ’’مسلمان یورپ پر یلغار کریں گے اور یورپ، جیسا کہ اسے ہم اب جانتے ہیں، کا وجود باقی نہیں رہے گا۔ اس سرزمین پر تباہی سالوں تک جاری رہے گی، یہاں کے باسی نکال دئیے جائیں گے، اور یہ براعظم تقریباً اجڑجائے گا۔‘‘اس سلسلے کی اگلی پیشنگوئی سال 2043 کے بارے میں ہے جس میں وانگا کہتی ہیں ’’یورپ کی اسلامی خلافت میں تبدیلی مکمل ہوگئی، روم کو دارالخلافہ قرار دے دیا گیا، دنیا کی معیشت مسلمان حکمرانوں کے تحت پھل پھول رہی ہے۔‘‘وانگا نے آنے والے وقت کے بارے میں کچھ اور اہم پیشنگوئیاں کر رکھی ہیں,سال 2066ء’امریکا روم پر قبضے اور عیسائیت کے احیاء کے لئے ایک نئی قسم کا ہتھیار استعمال کرے گا۔‘‘سال 2076ء’’یورپ میں کمیونزم لوٹ آئے گا، اور باقی دنیا میں بھی۔‘‘سال 2170ء ’’عالمی قحط‘‘سال 2480ء’’دو مصنوعی سورج آپس میں ٹکرائیں گے اور زمین پر تاریکی چھا جائے گی‘‘سال 3797ء ’’اس وقت تک زمین پر رہنے والی ہر زندہ چیز مرچکی ہوگی، تاہم انسانی تہذیب اس دنیا کو چھوڑ کر کسی اور دنیا میں جاچکی ہوگی۔‘‘

نابینا خاتون

مزید : صفحہ آخر


loading...