طیارہ حادثہ، 8میتیں ورثاء کے سپرد ، 39نعشیں ڈی این اے کیلئے پمز ہسپتال منتقل

طیارہ حادثہ، 8میتیں ورثاء کے سپرد ، 39نعشیں ڈی این اے کیلئے پمز ہسپتال منتقل

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد،ایبٹ آباد(سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک،اے این این) حویلیاں میں قومی ایئر لائن کے طیارے کو گزشتہ روز پیش آنے والے حادثے پر ملک بھر میں سوگ،8 میتیں شناخت کے بعد ورثاء کے سپرد،دیگر کی شناخت کا عمل جاری، جنید جمشید سمیت شہداء کی شناخت کیلئے ڈی این اے کرانے کا فیصلہ ،میتیں ہیلی کاپٹر کے ذریعے ایبٹ آباد سے پمز ہسپتال منتقل کر دی گئیں ،لواحقین کی آسانی کیلئے ہسپتال میں انفارمیشن ڈیسک قائم ،لواحقین کی بڑی تعداد اسلام آباد پہنچ گئی، حویلیاں میں جائے حادثہ سیل کر دیا گیا،پی آئی اے کا شہداء کے ورثاء کے سفری اخراجات برداشت کرنے کیساتھ ساتھ تدفین کیلئے پانچ لاکھ روپے فی کس دائیگی کا اعلان ،شہداء کے ورثاء کو انشورنس کے 50,50لاکھ روپے الگ سے ملیں گے۔تفصیلات کے مطابق حادثے میں جاں بحق ہونے والے افراد کی میتیں اسلام آباد پہنچا دی گئی ہیں جب کہ لواحقین کے لئے پمزاسپتال میں انفارمیشن ڈیسک بھی قائم کر دی گئی ہے۔حادثے کا شکار ہونے والے پی آئی اے کے بد قسمت طیارے میں جاں بحق ہونے والے افراد کے لواحقین اپنے پیاروں کی میتیں وصول کرنے کے لئے اسلام آباد پہنچنا شروع ہو چکے ہیں۔ معروف نعت خواں جنید جمشید کے بھائی دیگر افراد کے ہمراہ پی آئی اے کی پرواز کے ذریعے اسلام آباد پہنچے جہاں انہیں پی آئی اے حکام کی جانب سے تمام تر معلومات فراہم کی گئیں جب کہ لواحقین کے تمام سفری اخراجات بھی پی آئی اے ہی برداشت کر رہا ہے۔دوسری جانب طیارے کے حادثے میں جاں بحق ہونے والے افراد کی میتیں ایبٹ آباد سے آرمی ہیلی کاپٹرز کے ذریعے اسلام آباد اسپورٹس کمپلیکس پہنچا دی گئی ہیں جہاں سے انہیں ایمبولینسز کے ذریعے پمز اسپتال منتقل کیا گیا۔اس مقصد کے لئے پاک فوج نے 3ہیلی کاپٹر تعینات کئے تھے جن کے ذریعے شہدا کی باقیات کو ایوب میڈیکل کمپلکس سے اسلام آباد میں سپورٹس کمپلکس پہنچایا گیا جہاں سے 40ایمبولینسز کے ذریعے میتیں پمز منتقل کی گئیں۔پمز اسپتال کے ترجمان کا کہنا ہے کہ طیارہ حادثے میں جاں بحق ہونے والوں کے لواحقین کے لئے اسپتال کے کرٹسی سینٹر میں ویٹنگ روم بنایا گیا ہے، جبکہ اسپتال کے او پی ڈی میں میتیوں کے ڈی این اے ٹیسٹ کے انتظامات بھی مکمل کرلئے گئے ہیں ۔ایوب میڈیکل کمپلیکس کے ڈپٹی سپریڈنٹ ڈاکٹر جنید نے بتایا ہے کہ گذشتہ روز طیارے کے حادثے میں ہلاک ہونے والوں میں سے ایک ائیر ہوسٹس سمیت 8 افراد کی شناخت کر لی گئی ہے۔انھوں نے بتایا کہ اس حادثے میں ہلاک ہونے والی ایئر ہوسٹس کی لاش کی شناخت ان کے شوہر نے کی جبکہ ایک لاش کی شناخت فنگر پرنٹس اور دیگر چار لاشوں کی شناخت جائے حادثہ سے ملنے والے شواہد کے ذریعے کی گئی ہیں۔ان کا مزید کہنا تھا کہ تمام لاشوں کے ڈی این اے سیمپلنگ کر لی گئی ہے۔ آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ایبٹ آباد سے لاشوں کو اسلام آباد منتقل کرنے کے لیے تین فوجی ہیلی کاپٹر استعمال کیے جا رہے ہیں۔پی آئی اے کی جانب سے جاری ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ پی آئی اے کے چیئرمین اور چیف ایگزیکٹیو آفیسر نے اعلان کیا ہے کہ جہاز کے حادثے میں ہلاک ہونے والے افراد کے لواحقین کو پانچ پانچ لاکھ روپے نقد دیا جائے گا۔بیان میں کہا گیا ہے کہ ڈسٹرکٹ مینیجروں کو ہدایت کی گئی ہے کہ گھر گھر جا کر یہ معاوضہ دیں۔بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ اس رقم کے بعد قانون کے مطابق معاوضہ دیا جائے گا۔لواحقین کو یہ رقم تدفین اور دیگر اخراجات کے لئے دی جا رہی ہے ۔ انشورنس کے 50,50لاکھ روپے بعد میں دئیے جائیں گے۔ضلعی ایمرجنسی آفیسر غیور مشتاق احمد خان نے بتایا ہے کہ حادثے میں ہلاک ہونے والے تمام افراد کی لاشیں رات دو بجے ہی نکال لی گئی تھیں۔تاہم ان کا کہنا ہے کہ جائے حادثہ پر تاحال ملبہ ہٹانے اور دیگر شواہد اکھٹے کرنے کا کام جاری ہے۔ میتیوں کو ہیلی کاپٹرز کے ذریعے اسلام آباد منتقل کیا گیا ہے ۔ پمز اسپتال کے حکام کے مطابق ڈی این اے کے بعد میتیں لواحقین کے حوالے کی جائیں گی جب کہ اس حوالے سے اسپتال میں انفارمیشن ڈیسک بھی قائم کر دی گئی ہے۔ ہسپتال حکام کا کہنا ہے کہ لواحقین اپنے پیاروں کی میت کے حوالے سے ٹیلی فون نمبر 9260340-051پر معلومات حاصل کریں۔ئی ایس پی آر کا کہنا ہے کہ حویلیاں کے نواحی علاقے میں جائے حادثہ کو سیل کر دیا گیا۔میتیں نمونے لینے کے بعد روات منتقل کر دی گئی جن میتوں کی ڈی این اے ٹیسٹ رپورٹ موصول ہو جائیگی ان کو لواحقین کے حوالے کر دیا جائیگا، حویلیاں فضائی حادثے میں جاں بحق ہونے والیڈی سی چترال اسامہ وڑائچ، ان کی اہلیہ مہرین اور بیٹی ماہ رخ کی نماز جنازہ ایچ الیون قبرستان میں ادا کی گئی جس میں قائد ایوان سینیٹ راجہ ظفر الحق، وزیر اعلی کے پی پرویز خٹک، وزیر مملکت طارق فضل چودھری سمیت اہم سیاسی شخصیات اور اعلیٰ سرکاری حکام ،لواحقین اورشہریوں کی بڑی تعداد نے شرکت کی ۔نمازجنازہ کی ادائیگی کے بعدمیتوں کوسپردخاک کردیاگیا۔ادھر پمز ہسپتال میں تمام شہدا کی غائبانہ نماز جنازہ بھی ادا کی گئی ۔ جاں بحق افراد کی پمز ہسپتال میں غائبانہ نماز جنازہ میں میتیں لینے کیلئے آئے لواحقین اور بڑی تعداد میں شہری بھی شریک ہوئے ایئر ہوسٹس اسما عادل کی شناخت کانوں میں پہنی بالیوں سے ہوئی۔ ان کی تدفین ایئرپورٹ ہاؤسنگ سوسائٹی میں ان کی رہائش گاہ کے قریب قبرستان میں کی گئی۔ایئر کمانڈوز احسن غفار اور سمیع اللہ کی نماز جنازہ اے ایس ایف کوارٹرز میں ادا کی گئی۔ اس کے بعد ان کی میتیں آبائی علاقوں کو روانہ کر دی گئیں۔ چترال کے محمد نواز اور حاجی تکبیر کی میتیں ورثا کے سپرد کر دی گئیں۔

میتیں

مزید :

صفحہ اول -