126دن کا دھرنا دینے والوں کو کشمیر میں 126دن کا کر فیو نظر نہیں آتا: سراج الحق

126دن کا دھرنا دینے والوں کو کشمیر میں 126دن کا کر فیو نظر نہیں آتا: سراج الحق

  

لاہور (خصوصی رپورٹ) امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ 126 دن کا دھرنا دینے والوں کو کشمیر میں 126 دن کا کرفیو نظر نہیں آتا۔جب حکمران خود اپنے لئے صبح شام نئی قبریں کھودنے میں لگے ہوئے ہوں تو حکومتیں اپنی مدت پوری نہیں کرتیں۔حکمرانوں کو اپنی غلطیوں کا احساس اس وقت ہوگاجب وقت ان کے ہاتھ سے نکل چکا ہوگا۔ حکومت ڈلیور نہیں کرپارہی،حالات دن بدن گھمبیر صورت اختیار کررہے(بقیہ نمبر46صفحہ12پر)

 ہیں تو مڈ ٹرم الیکشن میں کوئی مضائقہ نہیں۔ ان ہاؤس تبدیلی اورقبل از وقت الیکشن بھی جمہوریت کا حصہ ہیں۔ہم چاہتے ہیں کہ معاملات مشاورت اور جمہوری طریقے سے حل ہوں۔ 22دسمبر کو مظلوم کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیلئے ملک بھر سے لاکھوں لوگ اسلام آباد پہنچیں گے اور حکمرانوں سے کشمیر پر خاموشی توڑنے کا مطالبہ کریں گے۔بھارتی غاصب فوج نے 80لاکھ کشمیریوں کو 126دن سے یرغمال بنا رکھا ہے اور ہمارے حکمران خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں۔پاکستان کے 22کروڑ عوام مظلوم کشمیریوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔حکمرانوں نے عوام کی نہ سنی تو پھر عوام بھی حکمرانوں کی نہیں سنیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے مانسہرہ میں ضلعی اجتماع ارکان سے خطاب اور میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ حکومت آرمی چیف کی مدت ملازمت کے معاملے کو ایک بار عدالت میں تماشا بنا چکی، اب اسمبلی میں محتا ط رہے۔اس حساس معاملے پرحکومت کا رویہ اب بھی مثبت اور سنجیدہ نہیں ہے۔انہوں نے کہاکہ چیف الیکشن کمشنر کی تقرری اتفاق رائے سے ہونی چاہئے۔اس منصب کا تقاضا ہے کہ ایک غیر جانبدار فردکو چیف الیکشن کمشنر بنایا جائے۔ہمارا موقف یہی ہے کہ تمام فیصلے میرٹ کی بنیاد پر ہوں۔

سراج الحق 

مزید :

ملتان صفحہ آخر -