مہذب شہری، منظم ٹریفک مہم میں اپنا اہم کردار ادا کریں‘ حافظ واحد محمود

مہذب شہری، منظم ٹریفک مہم میں اپنا اہم کردار ادا کریں‘ حافظ واحد محمود

  

ڈیرہ اسماعیل خان(بیورو رپورٹ) ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر کیپٹن (ر) حافظ واحد محمود نے ضلع ڈیرہ اسماعیل خان میں ٹریفک کے نظام کی بہتری اور عوام میں ٹریفک قوانین سے آگاہی اور قومی ذمہ داری کو نبھانے کے حوالے سے اعجاز شہید پولیس لائن میں ”مہذب شہری، منظم ٹریفک“ مہم کا افتتاح فیتہ کاٹ کر اور نعرہ تکبیر اللہ اکبر کے پرشگاف نعروں سے کردیا۔ اس اہم مہم کے افتتاح کے موقع پر ایڈشنل ایس پی نجم الحسنین لیاقت بھی موجود تھے۔اس  مہم کے 15روزہ پہلے مرحلے میں ٹریفک وارڈنز لوگوں کے ساتھ ٹریفک قوانین سے آگاہی کے حوالے سے خندہ پیشانی اور خوش اخلاقی سے پیش آئیں گے اور انکو ہیلمٹ کے استعمال، بلا نمبر موٹر سائیکل کی نمبر پلیٹ لگوانے اور غلط پارکنگ سے منع کرنے کے حوالے سے آگاہی فراہم کرینگے۔ اس پروقار تقریب میں ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر کیپٹن (ر) حافظ واحد محمود نے پرہجوم میڈیا بریفنگ میں الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا سمیت سوشل میڈیا کے نمائندوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ڈیرہ اسماعیل خان کے باشعور اور قانون کی پابندی کرنیوالے شہری ڈیرہ اسماعیل خان پولیس کی طرف سے شروع کی گئی ”مہذب شہری، منظم ٹریفک“ مہم میں اپنا اہم کردار ادا کرکے اپنے شہر کی ٹریفک کے نظام کو بہتر بنانے میں پولیس کے ساتھ قدم سے قدم ملا کر چلیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس مہم میں لوگوں میں اپنی حفاظت کو یقینی بنانے کیلئے ہیلمٹ اور پمفلٹ تقسیم کئے جائینگے۔ اچھی کارکردگی دکھانے والے ٹریفک وارڈنز اور ٹریفک سٹاف کو انعامات سے نوازا جائے گا اور کام چور و پیدا گیر اہلکاروں کو نشان عبرت بنایا جای گا۔ انہوں نے کہا کہ چوکوں کے ارد گرد ٹریفک کے نظام کی بہتری کیلئے نہ غلط پارکنگ کی اجازت ہوگی اور نہ ہی ریڑھی بانوں کو چوکوں پر ٹھہرنے کی اجازت ہوگی۔ ہمارا مقصد کسی کا کاروبار خراب کرنا ہرگز نہیں ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ٹریفک کے نظام کی بہتری کیلئے جلد ہی 20سے 25 ہیوی بائیکس بھی ٹریفک کے نظام کا حصہ بن جائینگے۔ اسی طرح ڈیرہ اسماعیل خان میں انٹرنیشنل ڈرائیونگ پرمٹ بھی مفت فراہم کرنیکا سلسلہ شروع کیا جارہا ہے۔ اس موقع پر ڈی ایس پی ہیڈ کوارٹر لیاقت خان اور انچارج ٹریفک فضل الٰہی بھی موجود تھے۔اس تقریب میں خوبصورت وردیوں میں ملبوس ٹریفک وارڈنز اور ٹریفک کے نظام میں استعمال ہونیوالے جدید بائیکس اور لفٹر بھی موجود تھے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -