بڑے مقصد کیلئے کشتیاں جلانا پڑتی ہیں، جنون ٹیلنٹ کو ہرا دیتا ہے،وزیراعظم عمران خان

بڑے مقصد کیلئے کشتیاں جلانا پڑتی ہیں، جنون ٹیلنٹ کو ہرا دیتا ہے،وزیراعظم ...
بڑے مقصد کیلئے کشتیاں جلانا پڑتی ہیں، جنون ٹیلنٹ کو ہرا دیتا ہے،وزیراعظم عمران خان

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعظم عمران خان نے کہاکہ بڑے مقصد کیلئے کشتیاں جلانا پڑتی ہیں، جنون ٹیلنٹ کو ہرا دیتا ہے، انسان کا وژن جتنا بڑا ہوگا اتنی ہی کامیابی حاصل کرے گا، کچھ دن پہلے بھی ایک پلان ہوا تھا، پھر بی اور سی ہوا، پھر زیڈ پر چلا گیا۔

وزیراعظم عمران خان نے نسٹ میں انسداد بدعنوانی ایپ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ لوگ کہتے تھے آپ سائنس وٹیکنالوجی کو سنجیدہ نہیں لے رہے،لوگ کہتے تھے آپ نے فوادچودھری کو وزیربنادیاہے،اچھا کپتان جانتا ہے کہ کھلاڑی کو کس جگہ کھلانا ہے،عوام نے سائنس وٹیکنالوجی میں فواد چودھری کی پرفارمنس دیکھی ہے،سائنس وٹیکنالوجی کیلئے فوادچودھری کی کوشش کوسراہتاہوں۔

وزیراعظم عمران خان نے کہاکہ پہلی بار نسٹ یونیورسٹی آیا ہوں،نہیں جانتا تھا کہ نسٹ یونیورسٹی میں کتنا زبردست کام ہورہا ہے،انہوںنے کہاکہ عوام اعتماد کھو دے تو محتاج ہوجاتی ہے،ہر چیز ایک وژن سے شروع ہوتی ہے،اللہ نے انسان کو طاقت سے نوازا ہے۔وزیراعظم عمران خان نے کہاکہ نسٹ پاکستان کی بہترین یورنیورسٹیوں میں سے ایک ہے،نسٹ یونیورسٹی کے طلبا پر بڑی ذمہ داریاں ہیں،وزیراعظم نے کہاکہ ہم تعلیم کے شعبہ میں بہت پیچھے رہ گئے ہیں، پاکستان میں میرٹ نہ ہونے کی وجہ سے ترقی رک گئی تھی ،ترقی رکنے سے آہستہ آہستہ پاکستان نیچے چلاگیا۔

وزیراعظم کا کہناتھا کہ دنیا بڑے بڑے امیروں کوجانتی ہے،تاریخ اسے جانتی ہے جس نے انسانیت کیلئے کام کیا ہو،بل گیٹس اپنا ساراپیسہ انسانیت کیلئے خرچ کررہے ہیں، بڑاوژن اپنی ذات سے نکل کر انسانیت کیلئے ہوتا ہے،انہوںنے کہاکہ انسان نے پہلے جوتصورکیاتھااسے حاصل کرچکاہے،جنون قابلیت کو شکست دے سکتا ہے،جب فیصلہ کرلیاجائے پھر کوئی پلان بی نہیں ہوتا،آپ کشتیاں جلاکرجاتے ہیں توکوئی پلان بی نہیں ہوتا،ابھی ایک پلان بی ہوا پھر سی اور پھر زیڈ ہوجائےگا۔

وزیراعظم عمران خان نے کہاکہ وژن سے پیچھے ہٹنے والے کبھی کامیاب نہیں ہوتے،گرکرکھڑے ہونے کے بعدمزید طاقت آجاتی ہے،کچھ لوگ برے وقت میں شکست خوردہ ہوجاتے ہیں،ان کاکہناتھا کہ ہر براوقت آپ کومشکل کاسامناکرنے کیلئے تیارکرتاہے،کامیاب انسان برے وقت میں خودکوسنبھالتاہے، جب تک آپ ہارنہیں مانیں گے،آپ کوکوئی ہرانہیں سکتا،وزیراعظم نے کہاکہ کچھ لوگ ریٹائرمنٹ کے بعد بوڑھے ہوجاتے ہیں،ہارٹ اٹیک ہوجاتاہے،میں جب کرکٹ سے ریٹائر ہوا تو دوسروں کی طرح بیٹھ جاتا،کرکٹ پرباتیں کرتااورکروڑوں کماسکتاتھا،انہوں نے کہاکہ جب کرکٹ کھیلتاتھا تومیرے بھی رول ماڈلز تھے۔

وزیراعظم نے کہا کہ جمعہ کی نماز کیلئے والد زبردستی لےکرجاتے تھے،دنیا کے رول ماڈل نبی کریم ہیں،نبی کریم کی طرززندگی پر چلنے والے لوگ عظیم بن گئے،انہوں نے کہا کہ معاشرے میں پیچھے رہنے سے احتساب اور میرٹ ختم ہوجاتا ہے،زندگی میں کوئی شارٹ کٹ نہیں،وزیراعظم نے کہاکہ جمہوریت میں میرٹ اورجوابدہی کاعمل ہوتاہے،بادشاہت کبھی بھی جمہوریت کا مقابلہ نہیں کرسکتی،ہمارے پاس بادشاہت تھی، جہاں جمہوریت تھی وہ ملک آگے چلے گئے،انہوںنے کہاکہ پوری فیملی سیاست میں آجاتی ہے جوجمہوریت کی نفی ہے،ایک پارٹی چیئرمین تھیوری لاتا ہے کہ جب بارش ہوتی ہے تو پانی آتا ہے۔

مزید : اہم خبریں /قومی /علاقائی /اسلام آباد