’ اتنے استعفوں سے کچھ نہیں ہوگا، اسمبلی توڑنی ہے تو 275 استعفے لے کر آؤ‘ اعتزاز احسن نے پی ڈی ایم پر بجلیاں گرادیں

’ اتنے استعفوں سے کچھ نہیں ہوگا، اسمبلی توڑنی ہے تو 275 استعفے لے کر آؤ‘ ...
’ اتنے استعفوں سے کچھ نہیں ہوگا، اسمبلی توڑنی ہے تو 275 استعفے لے کر آؤ‘ اعتزاز احسن نے پی ڈی ایم پر بجلیاں گرادیں

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان پیپلزپارٹی کے سینئر رہنما بیرسٹر اعتزازاحسن کا کہنا ہے کہ اسمبلی تحلیل کرنے کےلیے 342 میں سے 275 سے 300 استعفے درکار ہوں گے۔ 

نجی ٹی وی سماء نیوز کے ساتھ پیپلزپارٹی کے رہنما اعتزاز احسن نے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اپوزیشن اگر تہیہ کر لے کچھ بھی کر سکتی ہے لیکن اسمبلی تحلیل کرنے کےلیےقانونی تقاضے بھی پورے کرنا ہوں گے۔ انہوں نے بتایا کہ آئین کے مطابق 84 ایم این ایز اسمبلی میں جب تک ہوں اسمبلی تحلیل نہیں ہوسکتی۔  اسمبلی میں اگر 66 تک ایم این ایز بھی ہوں تو کوئی ایم این اے جب تک کورم کی نشاندہی نہ کرے تب تک کارروائی چلتی رہے گی۔

انہوں نے کہا کہ جب تک 84 ایم این ایز موجود ہوں تو اسمبلی کی کارروائی جاری رہتی ہے۔ اسمبلی قانونی ترامیم کے علاوہ تمام کارروائی کر سکتی ہے۔ انہوں نے ضمنی الیکشن کے حوالے سے بتاتے ہوئے کہا کہ ضمنی انتخابات اکٹھے کروانا مشکل ہے لیکن قسطوں میں بھی ہوسکتےہیں کیونکہ ن لیگ کی حکومت میں ایاز صادق نے ایک ایک سال تک ضمنی الیکشن نہ کرانے کی مثال قائم کی تھی۔

انہوں کہا کہ پی ڈی ایم کے استعفے دینے سے عمران خان کو سینیٹ الیکشن میں فائدہ ہو گا اور وہ اپنی مرضی سے سینیٹ میں جیت سکتی ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ سندھ حکومت چھوڑنا بہت بڑی قربانی ہوگی۔