فراق، انسان کی تفہیم بیان کرنے والے شاعر ہیں،تقی عابدی

  فراق، انسان کی تفہیم بیان کرنے والے شاعر ہیں،تقی عابدی

  

کراچی (پ ر)فراق گورکھپوری انسان اور کائنات کی تفہیم بیان کرنے والا زندہ شاعر ہے۔ فراق نے اردو شاعری کی روایات کو جدیدیت اور مابعد الجدیدیت کو ہم آہنگ کر کے زمین سے جڑی تہذیب اور ثقافت کو موثر انداز میں اپنی شاعری میں پیش کیا۔ ان خیالات کا اظہار کینیڈا سے آئے ممتاز ادیب اور دانشور ڈاکٹر تقی عابدی نے پریس کلب کی ادبی کمیٹی کے زیر اہتمام کلیات فراق کی تعارفی تقریب کے شرکا سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے بتایا کہ فراق غزل اور نظم ہی کے نہیں رباعیات کے بھی بڑے شاعر ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اردو دنیا کی ان چند زبانوں میں شامل ہے جس میں دنیا کی قدیم زبانوں سے زیادہ زندہ رہنے کی صلاحیت ہے۔ اس موقع پر تقریب کے صدر ڈاکٹر شاداب احسانی نے کہا کہ فراق نے اردو شاعری کو جدید آہنگ عطا کیا۔ رضوان صدیقی نے ڈاکٹر سید تقی عابدی کی شخصیت پر سیر حاصل گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ڈاکٹر تقی عابدی معروف فزیشن اور 68کتابوں کے مصنف اور مرتب ہیں۔ اس موقع پر ادبی کمیٹی کے سیکریٹری اے ایچ خانزادہ نے مہمان خصوصی کو سندھی ٹوپی اور اجرک کا تحفہ دیا۔ اس تقریب میں ڈاکٹر عالیہ امام، ڈاکٹر جاوید منظر، صفدر صدیق رضی، ڈاکٹر فہیم شناس کاظمی، راشد نور، عبدالسلام، محمد اسلام، نسیم انجم، ثبین سیف، شاہدہ عروج خان، راشد عزیز، اطہر اقبال، طارق جمیل، نسیم شاہ، جمال اکبر، ناصر شمسی، غلام علی وفا، سلیم احمد ایڈووکیٹ، سلمان پیر زادہ، کامران عثمان، اور انور صدیقی شریک تھے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -