پشاور ڈی ایچ اے پراپرٹی  ڈیلرز کا ایف بی آر  کیساتھ مذاکرات کامیاب

  پشاور ڈی ایچ اے پراپرٹی  ڈیلرز کا ایف بی آر  کیساتھ مذاکرات کامیاب

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


پشاور(سٹی رپورٹر)پشاور ڈی ایچ اے پراپرٹی ڈیلرز کا ایف بی ار کیساتھ مذاکرات کامیاب کے بعد ایس ار او 1568میں پندرہ جنوری تک ریلیف مل گیا ہے  ڈی ایچ اے پراپرٹی ڈیلرز  کے صدر عابد علی اور دیگر عمائدین نے گزشتہ روز ٹیکسز میں اضافہ کے خلاف ایف بی ار دفتر کے سامنے مظاہرہ کیا تھا جس پر ایف بی ار انتظامیہ  اور پارپراپرٹی ڈیلرز کے مابین مذاکرات ہوئے جو کامیاب ہوئے اور ایس ار او 1568 میں پندرہ تک تک توسیع کر دی  جبکہ اسکے بعد مذاکرات کئے جائیں گے پراپرٹی ڈیلرز کے مطابق ہم پہلے ہی ٹیکسز دے رہے اور پچھلے کئی عرصہ سے کاروبار متاثر تھا اسی لئے پراپرٹی ٹیکسز میں انتہائی اضافہ کے متحمل نہیں ہو سکتے تھے اسی لئے مجبور سڑکوں پر نکلنا پڑا لیکن ایف بی ار پشاور کی جانب سے ایس ار او میں توسیع ملنا خوش ائند ہے گزشتہ روز ہونیوالے ملاقات میں ڈی ایچ پشاور کے عہدیدارا، جنرل سیکرٹری محمد وسیم خٹک وائس صدر شاہداد علی سینئر وائس صدر  کامران آفردی حاجی احسان چیف الیکشن کمشنر  اور دیگر  پی پی ڈی اے عہدیداران مظہر وکیل اور  سراج یوسفزئی بھی موجود تھے۔تحصیل امیدوار باڑہ کے میئر کے لیے نامزد امیدوار خان ولی آفریدی نے کہا ہے کہ  علاقے کے سرمایہ دار سیاستدانوں نے مشکل اور مصیبت کے وقت میں باڑہ کے عوام کو تنہا چھوڑا تھا۔ باڑہ کے عوام کی خدمت کے لیے صرف جماعت اسلامی میدان میں موجود تھی۔ باڑہ کے عوام کے لیے جماعت اسلامی کے خدمات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز باڑہ میں انتخابی مہم کے دوران مختلف تقریبات میں کی۔ انتخابی مہم کے دوران انکا کہنا تھا کہ باڑہ کے عوام پر جب آپریشن کہ شکل میں مصیبت آئی تو برائے نام سرمایہ دار سیاستدان اپنا علاقہ چھوڑ کر لاہور اسلام آباد اور پشاور میں رہائش پذیر ہوئے اور باڑہ کے عوام کو مشکل وقت میں تنہا چھوڑ دیا  واحد جماعت اسلامی کے کارکنان تھے جنہوں نے باڑہ کے عوام کی کیمپوں میں بھی خدمت کی اور علاقے میں امن اور بحالی کے لیے بھی میدان میں موجود تھی جب علاقے میں آگ لگی ہوئی تھی تو کوئی بھی پوچھنے والا نہیں اب جب علاقے میں امن قائم ہوئی ہے تو ہر کوئی سیاست کرنے کے لیے میدان میں ہے انہوں نے علاقے کے عوام سے اپیل کی کہ 19 دسمبر کو موسمی سیاستدانوں اور سیاسی مداریوں کو مسترد کریں اور ترازو پر مہر لگا کر علاقے کی امن اور ترقی کے لیے جماعت اسلامی کا ساتھ دیں