مہساامینی کی ہلاکت، ایران میں احتجاج اور مظاہروں کے  الزام میں پہلی پھانسی دیدی گئی 

مہساامینی کی ہلاکت، ایران میں احتجاج اور مظاہروں کے  الزام میں پہلی پھانسی ...
مہساامینی کی ہلاکت، ایران میں احتجاج اور مظاہروں کے  الزام میں پہلی پھانسی دیدی گئی 

  

تہران (ویب ڈیسک) ایران میں احتجاج اورہنگامہ آرائی سمیت سیکیورٹی اہلکار کو زخمی کرنے کے الزام میں ایک شخص کو پھانسی دیدی گئی۔ کرد خاتون مہسا امینی کی دوران حراست  ہلاکت کے خلاف ایران بھر میں ہونے والے احتجاج اور مظاہروں میں ملوث 23 سالہ ایرانی شہری محسن شکیری کو عدالت نے سزائے موت سنائی تھی۔

"ایکسپریس نیوز "کے مطابق  احتجاج اور ہنگامہ آرائی میں ملوث ایرانی شہری شکیری پر سیکیورٹی اہلکار کو چاقو کے وار سے زخمی کرنےکا الزام تھا، 25ستمبر کو  حراست میں لئے جانے والے شکیری کو ایرانی عدالت نے 20 نومبر کو موت کی سزا سنائی جس پر جمعرات کی صبح  عملدرآمد کیا گیا۔

بین الاقوامی میڈیا کے مطابق مہسا امینی کی ہلاکت کے خلاف ایران میں جاری احتجاجی مظاہروں اور ہنگامہ آرائی میں ملوث دیگر افراد کو بھی سزائےموت دیئےجانے کا امکان ہے جبکہ اس حوالے سےگرفتار افراد کو قیدو بند کی سزائیں بھی سنائی گئی ہیں ۔

مزید :

بین الاقوامی -