گورنر کیلئے 3اہم خواتین سمیت ا یک د رجن سے زائد امیدوار میدان میں آ گئے

گورنر کیلئے 3اہم خواتین سمیت ا یک د رجن سے زائد امیدوار میدان میں آ گئے

  

لاہور(جاوید اقبال)گورنر پنجاب کی تعیناتی کیلئے مسلم لیگ (ن)کے اندرون اور بیرون ملک عہدے داروں میں اگرچہ جوڑ توڑاپنے عروج ر ہے مگر حقیقت حال یہ دیکھائی دے رہی ہے کہ مسلم لیگ (ن)کی قیادت کو ایک ایسی ہستی کی تلاش ہے جو گونگی بھی ہو اور بہری بھی ،تاحال تین اہم خواتین سمیت ایک درجن سے زائد اہم رہنما میدان میں آچکے ہیں اور ان امید واروں کی ٹانگیں کھینچنے کا سلسلہ بھی شروع ہو چکا ہے۔لیکن ذرائع کا کہنا ہے کہ اب تک جو نام سامنے آئے ہیں ان میں سے کسی ایک نام پر بھی وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ میں ہونے والی ملاقاتوں میں اتفاق نہیں ہو سکا۔مسلم لیگ (ن)کے ذرائع کا دعویٰ ہے کہ قیادت گورنر پنجاب کیلئے کسی ایسی ہستی کی متلاشی ہے جو’’یس مین ‘‘ہو اور گونگے بہروں کی طرح خاموشی سے پارٹی قیادت کی پالیسیوں اور احکامات کی بجا آوری کرے۔ذرائع نے بتایا کہ گورنر پنجاب کے عہدے کیلئے موزوں شخص کے بارے میں چھان بین جاری اور مسلم لیگ (ن)کی قیادت سابق گورنر پنجاب چوہدری سرور کے رویے اور استعفیٰ سے ڈری ہوئی ہے اور کسی ایسے با اعتماد شخص کو سامنے لانا چاہتی ہے جو (ن)لیگ کیلئے چوہدری سرور نہ بنے ۔ذرائع نے مزید بتایا کہ اب تک چوہدری جعفر اقبال،ذکیہ شاہنواز،تہمینہ دولتانہ،سعود مجید،جنرل ضیا ء الدین بٹ،یو اے ای (ن)لیگ کے صدر تنویر الحسن،پرویز ملک سمیت جن کے نام سامنے آئے ہیں ان میں سے کسی پر بھی پارٹی قیادت متفق نہیں ہو سکی البتہ ضرور ہے کہ مذکورہ نام ایک دوسرے کے سامنے آچکے ہیں اور ایک دوسری کی ٹانگیں کھیچنے میں مصروف ہیں تاہم ذرائع کا دعوٰی ہے کہ حکومت آئندہ دوتین روز میں کسی ایک نام کو حتمی شکل دینے میں کامیاب ہو جائیگی جبکہ یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ گورنر پنجاب کیلئے معروف دانشور عطالحق قاسمی کانام بھی زیر غور ہے۔

مزید :

صفحہ اول -