’’وائس آف پنجاب ‘‘ کے انعقاد سے نیا ٹیلنٹ سامنے آئے گا : شوبز شخصیات

’’وائس آف پنجاب ‘‘ کے انعقاد سے نیا ٹیلنٹ سامنے آئے گا : شوبز شخصیات

لاہور(فلم رپورٹر)شوبز کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والی شخصیات نے کہا ہے کہ ’’وائس آف پنجاب ‘‘مقابلہ گائیکی حکومت کا انتہائی احسن اقدام ہے اس سے مستقبل کے بہترین گلوکار دستیاب ہوں گے ۔ہمارے ملک میں بے پناہ ٹیلنٹ موجود ہے بس اس کو صلاحیتوں کے اظہار کا موقع نہیں ملتا اس پلیٹ فارم کے ذریعے گائیکی کے شوقین نوجوانوں کو اپنی صلاحیت کا لوہا منوانے کا موقع ملے گا۔ہمارے ملک کے گلوکاروں نے پوری دنیا میں اپنی صلاحیتوں کا لوہا منوایا ہے ۔استاد غلام حیدر خاں،امان اللہ،ڈی او پی خالد محمود،جاوید شیخ ، مدثر حسن قاسمی،گلفام خان ،سید جہانزیب علی،اشرف خان،توقیر ناصر،احسن خان،اعجاز باجوہ،محمدنفیس،ڈائریکٹر دلاور ملک،ذوالفقار حیدر،سید نور،میلوڈی کوئین آف ایشیاء پرائڈ آف پرفارمنس شاہدہ منی،صائمہ نور،میگھا،ماہ نور،یار محمد شمسی صابری،سہراب افگن ،ظفر اقبال نیویارکر،عذرا آفتاب،میاں عابد رشید،انیس خان ،عینی طاہرہ،عائشہ جاوید،میاں راشد فرزند،سدرہ نور،نادیہ علی،شین،سائرہ نسیم،صبا ء کاظمی، ،سٹار میکر جرار رضوی،آغا حیدر،دردانہ رحمان ،ظفر عباس کھچی ،سٹار میکر جرار رضوی ،ملک طارق،مجید ارائیں،طالب حسین،قیصر ثنا ء اللہ خان ،مایا سونو خان،عباس باجوہ،مختار چن،آشا چوہدری،اسد مکھڑا،وقا ص قیدو، ارشدچوہدری،چنگیز اعوان،حسن مراد،حاجی عبد الرزاق،حسن ملک،عتیق الرحمن ،اشعر اصغر،آغا عباس،صائمہ نور،خالد معین بٹ ،مجاہد عباس،ڈائریکٹر ڈاکٹر اجمل ملک،کوریوگرافر راجو سمراٹ،صومیہ خان،حمیرا چنا ،اچھی خان،شبنم چوہدری،محمد سلیم بزمی،ڈیشی راج،آشف چوہدری،سفیان ،انوسنٹ اشفاق،استاد رفیق حسین،فیاض علی خاں،پروڈیوسر شوکت چنگیزی،ظفر عباس کھچی،ڈی او پی راشد عباس،پرویز کلیم اور نجیبہ بی جی ،شیراز علی،طالب حسین اور عدنان علی طالب کاکہنا ہے کہ پنجاب میں گلوکاری کا شوق رکھنے والوں کے لئے ’’ وائس آف پنجاب ‘‘کے نام سے نیا ٹیلنٹ ہنٹ پروگرام شروع کیا جارہا ہے۔حکومت پنجاب کا یہ اقدام قابل تعریف ہے ۔یاد رہے کہ 02مارچ سے یہ پروگرام شروع کیا جا رہا ہے۔ جس کے بعد نا صرف پنجاب بلکہ پاکستان کے تمام علاقوں سے ایسے باصلاحیت اور سْریلی آواز رکھنے والے سنگرز کو منظرعام پر لایا جائے گا جو مواقع نہ ملنے کی وجہ سے گمنامی کا شکار ہیں۔ گانے والے بلاشبہ زبردست اور باصلاحیت فنکار ہوں گے مگر مواقع نہ ملنے کی وجہ سے ان کی آواز دنیا تک نہیں پہنچتی تھی۔ اسی وجہ سے ایک ایسا پروگرام شروع کیا جارہا ہے جس کے باعث اب اس طرح کا ٹیلنٹ ضائع نہیں ہوگا بلکہ ایسے باصلاحیت فنکار وں اور گلوکاروں کو اپنے آپ کو منوانے کا ایک موقع ملے گا۔ صیح معنوں میں یہ پروگرام وہ جوہری ثابت ہوگا جو اصل ہیرے کو سامنے لائے گا۔ شوبز شخصیات کاکہنا ہے کہ پنجاب کے تمام ریجنز سے سنگرز کو مقابلے میں حصہ لینے کے مواقع فراہم کئے جائیں گے اور سب کو مساوی نمائندگی کی جائے گی۔جو کہ انتاہئی خوش آئند بات ہے وائس آف پنجاب وہ فورم ہے جہاں سے مستقبل کے مہدی حسن، نور جہاں اور عالم لوہار سامنے لائے جائیں گے۔

وہ سریلی آوازیں جو مواقع نہ ملنے سے گمنام ہی رہ جاتی تھیں اب ان کو گلی محلوں، چوراہوں سے نکال کر عوام کے سامنے لائیں گے۔ ان کے سر پورے ملک میں گونجیں گے۔ اب چاہے کوئی ریڑھی بان کا بچہ ہو یاکسی کلرک کا، اپنی گائیکی کے اظہار کا سب کو یکساں موقع دیا جائے گا۔ فنکاروں کا مزید کہنا ہے کہ ہر مرحلے پر شفافیت اور میرٹ کو یقینی بنایا جائے۔

مزید : کلچر