غیر ملکی نمائشیں پاکستانی سٹالوں کی کامیابی کیلئے سفارتخانے بھرپور دلچسبی لیں،پرویز حنیف

  غیر ملکی نمائشیں پاکستانی سٹالوں کی کامیابی کیلئے سفارتخانے بھرپور دلچسبی ...

  



لاہور(این این آئی)جرمنی میں منعقدہ ”ڈومو ٹیکس“نمائش میں شرکت کرنے والے پاکستانی ایگزی بیٹرز نے پاکستانی سفارتخانے کے متعلقہ افسران کی جانب سے کئے گئے انتظامات پر عدم اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان، مشیر خزانہ ڈاکٹر حفیظ شیخ اور مشیر برائے تجارت عبد الرزاق،ٹریڈ ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے ذمہ داران اس کا سختی سے نوٹس لیں،بیرون ممالک نمائش میں شرکت کا مقصد پاکستانی مصنوعات کی تشہیر کے ساتھ سب سے بڑھ کر نمائش میں اپنے ملک کی نمائندگی کرتے ہوئے پاکستان کا پرچم لہرانا ہوتا ہے۔نمائش میں شرکت کرنے والے لاہور چیمبر کے سابق صدر پرویز حنیف اور دیگر نے اپنے شدید تحفظات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ منتظمین کے بروقت اقدامات نہ ہونے کی وجہ سے ”ڈو موٹیکس“نمائش میں مصنوعات کے ڈسپلے کیلئے سٹالز کے لئے موزوں جگہ نہیں مل سکی، ہاتھ سے بنے ہوئے کارپٹ کو ڈسپلے کرنے کیلئے 15سے20فٹ اونچے خصوصی سٹینڈز ڈیزائن کئے جاتے ہیں لیکن کنٹریکٹر نے ایگزی بیٹر سے کسی طرح کا رابطہ کئے بغیر 5سے6فٹ کے سٹینڈز بنائے جس سے کارپٹ کی مصنوعات اس طرح ڈسپلے نہیں کی جاسکیں جو اس کی ضرورت تھی۔اسی طرح نمائش میں شریک دوسرے ایگزی بیٹرز کو بھی اسی طرز کے مسائل کا سامنا رہا۔ سروسز کی فراہمی کیلئے بھی خاطر خواہ انتظامات نہیں کئے گئے جس سے شدید مشکلات کاسامنا کرنا پڑا۔ انہوں نے حکومت کی توجہ اس جانب مبذول کرائی ہے کہ غیر ملکی نمائشوں میں ہمارا مقابلہ روایتی حریف بھارت کے ساتھ ہوتا ہے لیکن اب خطے کے دوسرے ممالک بھی ہمارے مقابلے پر ہیں جس کیلئے ہمیں زیادہ محنت کرنے کی ضرورت ہے۔سب سے تشویشناک امر یہ ہے کہ سفارتخانے کے متعلقہ افسران پاکستان سے جانے والے ایگزی بیٹرز کے تحفظات اور شکایات سننے کیلئے ہی تیار نہیں ہوتے۔مطالبہ ہے کہ نمائش میں شرکت کرنے والوں کیلئے مختص سبسڈی متعلقہ ایسوسی ایشنزکے ذریعے دی جائے اور شفافیت کیلئے بیشک مانیٹرنگ اور آڈٹ کا کڑا نظام لایا جائے جس کیلئے ہم ہر طرح کا تعاون دینے کے لئے تیار ہیں۔ نمائش کے دنوں میں متعلقہ سفارتخانے کے ذمہ دار افسروں کی دوسر ی سر گرمیوں پر مکمل پابندی عائد کر کے مستقل ڈیوٹیاں ہونی چاہئیں تاکہ وہ پاکستان سے جانے والے ایگزی بیٹرز کے ساتھ مسلسل رابطے میں رہیں اور پاکستان میں بھی ایک خصوصی ڈیسک قائم کیا جائے جو نمائشوں میں شریک پاکستانیوں کو درپیش کسی بھی مشکل اور شکایت کا فوری ازالہ کرنے کیلئے اقدامات کرے۔

جب تک متعلقہ سفارتخانے نمائشوں کی کامیابی میں دلچسپی نہیں لیں گے برآمد کنندگان کسی طرح کے نتائج حاصل نہیں کر سکتے۔ پرویز حنیف نے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت غیر ملکی نمائشوں میں شرکت کرنے والے تمام برآمد شعبوں کی کانفرنس بلائے اور اس حوالے سے تجاویز مرتب کر کے انہیں پالیسی کی شکل دی جائے تاکہ مستقبل میں اس طرح کے تحفظات سامنے نہ آئیں اور ملک کی برآمدات میں بھی اضافہ ہو۔

مزید : کامرس