حکومت بجٹ کیلئے سرمایہ کاروں سے مشاورت کا آغاز کرے، کارپٹ ایسوسی ایشن 

    حکومت بجٹ کیلئے سرمایہ کاروں سے مشاورت کا آغاز کرے، کارپٹ ایسوسی ایشن 

  



لاہور (آن لائن)پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن کے چیئرمین محمد اسلم طاہر نے کہا ہے کہ حکومت آئندہ مالی سال کے بجٹ کیلئے چیمبرز، ایسوسی ایشنز،مینو فیکچررز اور خصوصاًبرآمد کنندگان سے تحریر ی تجاویز طلب کرنے کیلئے پیشگی مشاورتی سیشنز کا آغازکرے،خود مختاری کی منزل حاصل کرنے کیلئے مضبوط معیشت ناگزیر ہے،پاکستانی سفارتخانے برآمدات کے فروغ میں کلیدی کردار ادا کر سکتے ہیں اور آئندہ بجٹ میں ان کیلئے اہداف پر مبنی موثر پالیسی کا اعلان کیا جانا چاہیے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ایسوسی ایشن کے جائزہ اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر کارپٹ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے چیئرپرسن پرویز حنیف،ایسوسی ایشن کے وائس چیئرمین شیخ عامر خالد،سینئر مرکزی رہنما عبد اللطیف ملک،سینئر ممبر ریاض احمد، سعید خان، میجر (ر)اخترنذیر، ملک اکبر اور کارپٹ انڈسٹری سے وابستہ دیگر نمائندے بھی موجود تھے۔ اجلاس میں کارپٹ انڈسٹری کو درپیش مشکلات کا تفصیل سے جائزہ لیا گیا۔اسلم طاہر نے کہا کہ حکومت کی اقتصادی ٹیم آئندہ بجٹ کی دستاویز کو ترقی کا ٹول بنانے کیلئے تمام اسٹیک ہولڈرزسے پیشگی مشاورت کا آغاز کرے اورسامنے آنے والی قابل عمل تجاویز کو بجٹ کا حصہ بنایا جانا چاہیے۔

 انہوں نے کہا کہ حکومت کا موقف ہے کہ صنعتی زونزسمیت دیگر کاروبار ی اداروں کو چلانا نجی شعبے کا کام ہے لیکن اس کیلئے ضروری ہے کہ حکومت سرپرستی اور معاونت بھی فراہم کرے۔نجی شعبہ برآمدات کے فروغ کیلئے ہر ممکن اقدامات کر رہا ہے اور انشا اللہ پاکستان جلد برآمدات میں نمایاں کامیابیاں حاصل کرے گا۔انہوں نے مزید کہا کہ برآمدات کے فروغ کیلئے مینو فیکچررز اوربرآمدکنندگان کے لئے سہولیات اور مراعات کو بوجھ نہ سمجھا جائے بلکہ یہ اقدامات سرمایہ کاری کی حیثیت رکھتے ہیں جوآنے والے سالوں میں انتہائی سود مند ثابت ہوں گے جس سے خود مختاری کی منزل مزید قریب آئے گی۔انہوں نے کہا کہ حکومت پاکستانی مصنوعاتی کی تشہیر کے لئے سنگل کنٹری نمائشوں کی پالیسی لائے۔

جبکہ برآمدی انڈسٹری سے وابستہ افراد کو حکومتی شخصیات کے غیر ملکی دوروں میں شامل کیا جائے اوروفود کی سطح پر رابطے بڑھنے سے مثبت نتائج حاصل ہوں گے۔

مزید : کامرس