ایرانی جیل میں قید ساٹھ سالہ محققین شادی کی اجازت کے طلبگار

ایرانی جیل میں قید ساٹھ سالہ محققین شادی کی اجازت کے طلبگار

  



تہران(این این آئی)ایران کی ریاستی سکیورٹی قوانین کی خلاف ورزی کے الزام میں مقید دو فرانسیسی ایرانی محققین نے جیل حکام کو شادی کی اجازت کی درخواست دے دی ہے۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ایران اور فرانس کی دوہری شہریت کی حامل ممتاز ماہر بشریات فریبا عادل خواہ اور ان کے ہمکار افریقی علوم کے ماہر اور فرانسیسی محقق رولاند گابرئیل مارشل نے اوین جیل کے حکام کو شادی کرنے کی کی اجازت کے لیے علیحدہ علیحدہ درخواسیتں پیش کیں۔ ان دونوں کے وکیل سعید دھقان کے مطابق فریبا اور مارشل دونوں کی عمریں 60 سال سے زائد ہیں۔ یہ دونوں ایران کی اوین جیل میں خواتین اور مردوں کے الگ الگ حصوں میں ہیں۔ ان کے وکیل سعید دھقان نے فریبا کی صحت کے بارے میں تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اْن کی صحت روز بروز گر رہی ہے کیونکہ وہ گزشتہ دسمبر سے بھوک ہڑتال پر ہیں۔ان دونوں فرانسیسی باشندوں کے وکیل سعید دھقان نے بتایا کہ فریبا اور مارشل کی جانب سے دی گئی شادی کی اجازت کی درخواست پر فیصلہ آئندہ ہفتے متوقع ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ دونوں فرانس میں گزشتہ 38 سالوں سے جیون ساتھی کی حیثیت سے رہ رہے تھے۔ اگر انہیں شادی کی اجازت مل گئی تو وہ جیل کے اندر ایک دوسرے سے مل سکیں گے۔

مزید : عالمی منظر