ایپکاکا پنجاب بھر میں احتجاجی تحریک کے شیڈول کا اعلان

ایپکاکا پنجاب بھر میں احتجاجی تحریک کے شیڈول کا اعلان

لاہور( خبرنگار) ایپکا کا پنجاب بھر میں احتجاجی تحریک کا اعلان، ہر ماہ کے پہلے منگل کو تمام دفاتر کی تالا بندی اور جلسے ، ہر ماہ کے آخری منگل کوصوبہ بھر کے تمام اضلاع میں احتجاجی ریلیاں، 27جنوری کو سول سیکرٹریٹ24فروری کو وزیر اعلیٰ ہاﺅس کا گھیراﺅ کیا جائے گا اس کے باوجودمطالبات منظور نہ ہونے کی صورت میں5مارچ کو پنجاب بھر کے تمام ملازمین کا وزیراعلیٰ ہاﺅس کے باہر ڈے نائٹ دھرنا ہو گا۔ یہ اعلانات اور مطالبات پنجاب سمیت ملک بھر کے سرکاری ملازمین کی تنظیم ایپکا کے ایک ہنگامی اجلاس میں کیا گیا، جو کہ گزشتہ روز صوبائی صدر ایپکا حاجی محمد ارشادکی قیادت میں منعقد ہوا بعد ازاں ملازمین نے اپنے مطالبات کے حق میں احتجاجی مظاہرہ بھی کیا۔ اس موقع پر اپیکا کے اجلاس میں لاہور سمیت تمام اضلاع کے صدور و جنرل سیکرٹریز نے بھرپور شرکت کی۔اجلاس میں متفقہ طور پر فیصلہ کیا گیا کہ حکومت پنجاب ہمارے چارٹر آف ڈیمانڈ پر فی الفور غوروغوض کرتے ہوئے مطالبات منظور کرے۔

 اس سلسلے میں مطالبات کی منظوری تک ہر ماہ کے پہلے منگل کو پنجاب بھر کے تمام دفاتر میں احتجاجی جلسے منعقد کیے جائیں گے اور آخری منگل کو پنجاب بھر کے تمام اضلاع میں ضلعی سطح پر مظاہرے کیے جائیں گے اسی سلسلے میں 27جنوری کوپنجاب سول سیکرٹریٹ لاہور اور24فروری کو وزیر اعلیٰ ہاﺅس کا گھیراﺅکیا جائے گااور احتجاجی ریلیاں نکالی جائیں گی اگراس کے باوجود سرکاری ملازمین بالخصوص صوبہ بنجاب کے سرکاری ملازمین کے پے سکیلوں کو اپ گریڈ نہ کیا گیا تو صوبہ بھر سمیت پورے ملک سے سرکاری ملازمین لاہور میں اپیکا کے صوبائی آفس میں جمع ہوں گے اور حکومت کی ہٹ دھرمی کے خلاف 5مارچ کو وزیر اعلیٰ ہاﺅس کے سامنے ڈے اینڈ نائٹ دھرنا دیں گے۔ اس موقع پر ایپکا کے صوبائی و مرکزی رہنما ﺅں حاجی محمد ارشاد، لالہ محمد اسلم، حاجی فضل داد گجر، اکرم سلطان، ظفر کمبوہ سمیت ارشد باجوہ، رانا محمد اشرف اور محمد یونس بھٹی نے بھی خطاب کیا۔ بعد ازاں ملازمین نے اے جی آفس کے سامنے اپنے مطالبات کے حق میں احتجاجی مظاہرہ بھی کیا۔ جس میں ملازمین نے مرکزی و صوبائی رہنماﺅں سے اظہار یکجہتی کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے اگر ان کے مطالبات منظور نہ کئے تو وہ ایوان وزیراعلیٰ کے سامنے ڈے اینڈ نائٹ دھرنے میں بھوک ہڑتال کا بھی اعلان کر سکتے ہیں اور اس میں حکومت نے سرکاری ملازمین پر کسی قسم کی لاٹھی چارج یا زیادتی کرنے کی کوشش کی تو وہ گرفتاریوں سے کسی بھی صورت میں نہیں گھبرائیں گے اور اپنے مطالبات کی منظوری تک ایوان وزیراعلیٰ کے باہر دھرنے کو جاری رکھیں گے۔

مزید : میٹروپولیٹن 4