کاہنہ پولیس کی ہٹ دھرمی ،چوری ، ڈکیتی میں ملوث گینگ فرار ہو گیا

کاہنہ پولیس کی ہٹ دھرمی ،چوری ، ڈکیتی میں ملوث گینگ فرار ہو گیا

  



کاہنہ ( نامہ نگار) کاہنہ انویسٹی گیشن پولیس کی نااہلی کی وجہ سے ڈاکوؤں کاگروہ فرار،پولیس مبینہ طور پر گرفتار ڈاکو سے مک مکا میں مصروف رہی ۔ تفصیلات کے مطابق چند روز قبل گجومتہ میں واقع موبائل شاپ کے مالک رشید احمد کو تفتیش کی غرض سے تھانے بلایا گیا، انچارج انویسٹی گیشن حاجی عبدالغفورنے دکاندار رشید احمد پر الزام عائد کیا کہ اس نے ایک چوری کا موبائل خریدکر اسے بیچا ہے ،جس شخص کو موبائل بیچا اسے پولیس نے گرفتار کرنے کا دعویٰ کرتے ہوئے بتایا کہ وہ پکڑا جا چکا ہے ۔رشید احمد نے پولیس کو بتایا کہ اس نے جس شخص سے موبائل خریدا ہے وہ اس کو جانتا ہے اور اسے گرفتار کروا سکتا ہے،جس پر انویسٹی گیشن پولیس نے رشید سے اصلی ملزم پکڑوانے کے وعدے پر اسے چھوڑ دیا ۔ دو روزبعد وہی شخص رشید احمد کی ساتھ والی دوکان پر آیاتو اس نے ساجد عرف ساجھی کو تین عدد موبائل فونز کے ساتھ پکڑ کر انویسٹی گیشن پولیس کے حوالے کر دیا۔ جبکہ اس کی ساتھی خاتون جس کے بیگ میں مزید درجنوں موبائل تھے ۔موقع پاکر وہاں سے فرار ہو گئی ۔ پولیس نے اس اہم گرفتاری کے دودن بعد ساجد ساجھی کے کرائے کے گھر پر چھاپہ مارا لیکن وہاں کوئی نہ ملا کیونکہ ملزمان تو کب کے فرار ہو چکے تھے،فرار ملزمان تین خواتین سمیت بارہ افراد پر مشتمل گینگ تھا اور ان کے پاس دس لوگوں سے چھینی ہوئی موٹر سائیکلیں بھی تھیں جن پر وہ کافی عرصہ سے مختلف علاقوں میں وارداتیں کرتے تھے۔ پولیس نے چھاپے کے دوران گھریلو سامان کے علاوہ دس موبائل سیٹ اور کچھ طلائی زیورات قبضہ میں لے لیے۔اہل محلہ کے مطابق پولیس اگر بروقت کارروائی کر تی تو ان جرائم پیشہ لوگوں کا گروہ باآسانی گرفتار کیا جا سکتاتھا لیکن پولیس نے مجرمانہ تساہل سے کام لیا ۔اہل محلہ نے الزام عائد کیا کہ پولیس کاروائی کرنے کی بجائے گرفتارڈاکو سے مک مکا کرنے میں مصروف رہی جس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے یہ گینگ یہان سے فرار ہو گیا۔اس سلسلے میں جب حاجی عبدالغفور سے رابط کیاگیا تو انہو ں نے کہا کہ ہم نے اس ڈاکو کے ایک اور ساتھی کو بھی گرفتار کر لیاہے ۔ اور باقی بھی جلد ہی گرفتار کر لیں گے۔

مزید : علاقائی