پاکستان دہشتگردوں کی محفوظ پناہ گاہیں ختم کرے ورنہ امریکہ اپنا تحفظ کریگا : سی آئی اے چیف

پاکستان دہشتگردوں کی محفوظ پناہ گاہیں ختم کرے ورنہ امریکہ اپنا تحفظ کریگا : ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک ،نیوزایجنسیاں) امریکی خفیہ ایجنسی سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو نے ہرزہ سرائی کرتے ہوئے کہا ہے کہ پاکستان دہشت گردوں کو محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رہا ہے اور ہم نے امداد بند کر کے اسلام آباد کو ایک موقع دیا ہے۔معروف امریکی پروگرام ’فیس دی نیشن‘ میں پاکستان سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب میں سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ میں پاکستان کے حوالے سے امریکہ کی پالیسی پر تو گفتگو نہیں کروں گا لیکن انٹیلی جنس چیف کی حیثیت سے اس حوالے سے ضرور بات کروں گا۔مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ ہم دیکھ رہے ہیں کہ پاکستان مسلسل ان دہشت گردوں کو محفوظ پناہ گاہیں فراہم کر رہا ہے جو امریکہ کیلئے خطرہ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے پاکستان کو آگاہ کر دیا ہے کہ اب یہ سب قابل قبول نہیں ہوگا۔پاکستانی امداد کی کٹوتی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ ایسا کر کے ہم نے پاکستان کو ایک موقع فراہم کیا ہے، اگر اسلام آباد نے مسائل پر قابو پالیا تو ہمیں ان کے ساتھ تعلقات کو آگے لے کر چلنے میں خوشی ہو گی اور اگر پاکستان نے ایسا نہیں کیا تو ہم امریکا کا تحفظ کریں گے۔سی آئی اے چیف نے مزید کہا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ واضح طور پر کہہ چکے ہیں کہ وہ چاہتے ہیں پاکستان ان دہشت گردوں کی پناہ گاہوں کا خاتمہ کرے جو امریکا کے لیے خطرہ ہیں۔ ۔قبل ازیں امریکی سی آئی اے کے سربراہ نے ایران میں حالیہ ہنگاموں اور احتجاج میں ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔سی آئی اے کے سربراہ مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ ایران میں حکومت مخالف مظاہروں اور احتجاج کے پیچھے سی آئی اے کا ہاتھ نہیں ہے۔انہوں نے اس بات کی بھی تردید کی کہ احتجاج کے پیچھے اسرائیل اور سعودی عرب ملوث ہیں۔امریکی ٹی وی کو انٹرویو میں سی آئی اے سربراہ کا کہنا تھا کہ ایران کے معاشی حالات بہت خراب ہے۔ یہی وجہ ہے کہ لوگ از خود سڑکوں پر احتجاج کے لیے آئے ۔ یہ لوگ بہتر زندگی کا مطالبہ کررہے تھے۔انہوں نے مزید کہا کہ خراب حالات کی ذمہ دار ایران حکومت خود ہے جو عوام کے مسائل پر توجہ نہیں دے رہی۔صدر ٹرمپ کے حوالے سے شائع کتاب کے حوالے سے مائیک پومپیو کا کہنا تھا کہ وہ سمجھتے ہیں کہ ڈونلڈ ٹرمپ صدر بننے کے لیے مکمل طورپر اہل ہیں ، وہ ذہنی مریض نہیں ، بریفنگ کے دوران وہ بہت سنجیدہ ہوتے تھے۔ وہ معاملات کی پیچیدگی کو سمجھتے ہیں اور بریفنگ کے دوران وہ بہت مشکل سوالات بھی کیا کرتے تھے۔
سی آئی اے چیف

مزید :

صفحہ اول -