موبائل فون کمپنیاں سالانہ 400ارب روپے ٹیکس ادا نہیں کرتیں : چیئر مین نیب

موبائل فون کمپنیاں سالانہ 400ارب روپے ٹیکس ادا نہیں کرتیں : چیئر مین نیب

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک ،آئی این پی) قومی احتساب بیورو کے چےئر مین جسٹس(ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ سپر یم کورٹ آف پاکستان کے نیب سے متعلق173فیصلے ہیں تمام افسران ان فیصلوں اور نیب کے قوانین کو پڑھیں اور کوئی بھی انکوائری اور انوسٹی گیشن قانون کے دائرے سے باہر نہیں ہونی چاہیے ،نیب کے کام میں تبدیلی کو پوری قوم دیکھ رہی ہے ہم نے پوری قوم کیساتھ مل کر ملک سے بد عنوانی کا خاتمہ کر نا ہے اور اس سلسلے میں کوئی کوتاہی نیب افسران کی برداشت نہیں کی جائیگی ۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز قومی احتساب بیورو میں ایک اجلا س سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ اس موقع پر علاقائی بیوروز کی کار کردگی کا جائزہ لیتے ہوئے پراسیکیوشن ‘آپر یشن اور آگاہی اورتدارک ڈویژن نے اپنی کارکردگی پر روشنی ڈالی۔ چےئر مین نیب نے کہا کہ ملک اس وقت84ارب ڈالرز سے زائد کا مقروض ہے جبکہ دوسری طرف موبائل فون کمپنیاں مبینہ طور پر سالانہ تقریبا400ارب روپے کا ٹیکس ادا نہیں کرتیں۔ نیب میں اب صرف اور صرف قانون کے مطابق کام کام اور کام ہوگا ۔ انہوں گزشتہ 3ماہ کی کارکردگی رپورٹ پر اطمنیان کا اظہار کرتے ہوئے ہدایت کی کہ نیب کے کام میں تبدیلی پوری قوم دیکھ رہی ہے ہم نے پوری قوم کے ساتھ ملک سے بد عنوانی کا خاتمہ کر نا ہے اور اس سلسلے میں کوئی کوتاہی نیب افسران کی برداشت نہیں کی جائیگی۔

چیئرمین نیب

لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک ،خبر نگار ) چیئرمین نیب نے پنجاب حکومت کے وزیر زعیم قادری سمیت دیگر کے خلاف شکایات کی جانچ پڑتال کا حکم دے دیا۔قومی احتساب بیورو (نیب) کی جانب سے جاری اعلامیہ کے مطابق صوبائی وزیر زعیم قادری پر سمال انڈسٹریل کو آپریٹو ہاؤسنگ سوسائٹی میں غیرقانونی فوائد لینے اور سوسائٹی کی زمین پر قبضہ کرنے کا الزام ہے۔اعلامیہ کے مطابق چیئرمین نیب نے ڈی جی نیب لاہور کو زعیم قادری کے خلاف شکایات کی جانچ پڑتال کرکے دو ماہ میں رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔نیب اعلامیہ میں مزید کہا گیا ہے کہ چیئرمین نیب نے سابق ایم پی اے پنجاب احمد حسن ڈاہرکے خلاف بھی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔اعلامیہ میں بتایا گیا ہے کہ احمدحسن ڈاہرپر سرکاری وسائل سے اپنی زمین پر روڈ اور کالونی بنانے کاالزام ہے، چیئرمین نیب نے ڈی جی نیب ملتان کو دو ماہ میں احمد حسن کے خلاف شکایات کی رپورٹ پیش کرنے کا حکم دیا ہے۔نیب اعلامیہ کے مطابق چیرمین نیب نے سابق چیئرمین ریلوے عارف عظیم کیخلاف شکایت کی جانچ پڑتال کا بھی حکم دے دیا ہے، ان پر چینی فرم سے پیپرا رولز کی خلاف ورزی کرتے ہوئے 58 ریلوے انجن خریدنے کا الزام ہے۔چیئرمین نیب نے ڈی جی نیب لاہور کو ہدایت دی ہے کہ عارف عظیم کے خلاف شکایت کی تحقیقاتی رپورٹ 2 ماہ میں پیش کی جائے۔

شکایات/جانچ پڑتال

مزید : صفحہ اول