ڈیمانڈ ، سپلائی کا ڈیٹا تیار ، اشیاء خوردونوش کیلئے قانون سازی کی جائے

ڈیمانڈ ، سپلائی کا ڈیٹا تیار ، اشیاء خوردونوش کیلئے قانون سازی کی جائے

ملک کے معروف مینوفیکچرنگ ٹیکنالوجسٹ اور چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈریپ ڈاکٹر اسلم افغانی نے کہا ہے کہ مارکیٹ میں غیر معیاری اور مضر صحت ڈبے کے دودھ اور مصنوعی دودھ کی روک تھام کیلئے دودھ کی ڈیمانڈ اور سپلائی کو دیکھنا ہو گا اور اس کیلئے ایسے لوگ جو مصنوعی دودھ بنا کر مارکیٹ میں فروخت کررہے ہیں ان کیلئے ریگولیشن رجسٹریشن اور لائسنسنگ کا نظام وضع کرنا ہو گا جس کیساتھ ساتھ پانی اور تیل کے ملاپ سے دودھ تیار کرنیو الوں کیلئے باقاعدہ طور پر فارمولیشین کرنا ہو گی کہ وہ اس فارمولے کے تحت دودھ بنا سکتے ہیں اور جب یونٹ رجسٹرڈ ہو جائیں تو ان کی ریگو لرانسپکشن کرنا ہو گا۔وہ ایشو آف دی ڈے میں گفتگو کررہے تھے۔انہوں نے کہا کہ ملکی سطح پر ڈریپ کی طرز پر فوڈ اتھارٹی جو پورے ملک کیلئے دودھ سمیت کھانے پینے کی دیگر اشیاء کیلئے ایک جیسا قانون بنائے اس کے قیام کی اشد ضرورت ہے اسلم افغانی نے کہا کہ مصنوعی طریقے سے دودھ پانی اور خوردنی تیل کو ملا کر تیار کیا جارہا ہے جس کو گاڑھا اور خراب ہونے سے بچانے کیلئے صرف اور فارمالین جوکہ انتہائی طاقتور زہر ہے کہ چند قطرے ملا ئے جاتے ہیں اگر یہ زیادہ مقدار میں ملائے جائیں تو پھر دودھ مضر صحت بن جاتا ہے میں یہ نہیں کہتا کہ سب لوگ مضر صحت دودھ بنا رہے ہیں لیکن ہر کوئی ٹھیک بھی نہیں بنا رہا جعلساز اس وقت میدان میں آتے ہیں کہ جب ڈیمانڈ یا طلب زیادہ ہو جائے اور سپلائی کم ہو صحت مند دودھ کیلئے ضروری ہے کہ مارکیٹ کا ڈیٹا تیار کیا جائے کہ ہمارے پاس کتنے دودھ کی ضرورت ہے اور ہمارے پاس کتنا موجود ہے اور پھر جا کر قانون سازی ہو سکتی ہے۔

اسلم افغانی

مزید : صفحہ اول