گاندھی کے قتل کی دوبارہ تحقیقات کی ضرورت نہیں، بھارتی سپریم کورٹ

گاندھی کے قتل کی دوبارہ تحقیقات کی ضرورت نہیں، بھارتی سپریم کورٹ

نئی دہلی( مانیٹرنگ ڈیسک )بھارتی سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ موہن داس کرم چند گاندھی کے قتل کی دوبارہ تحقیقات کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔جسٹس ایس اے بوڈلے اور جسٹس نگسوارا راؤ پر مشتمل دو رکنی بینچ نے گاندھی قتل کیس کی سماعت کی۔ درخواست گزار کی جانب سے پیش کردہ شواہد کی جانچ پڑتال کرنے والے سینئر ایڈووکیٹ امرندرا سارن نے عدالت کو بتایا کہ قاتل، اس کا نظریہ اور آلہ واردات کی نشاندہی ہوچکی ہے اور اس کیس کی مزید تحقیقات کی ضرورت نہیں۔درخواست گزار نے گزشتہ سال موقف اختیار کیا تھا کہ گاندھی کو تین کی بجائے 4 گولیاں ماری گئیں اور چوتھی گولی کسی دوسرے شخص نے ماری تھی جس کے دستاویزی ثبوت موجود ہیں۔تاہم سپریم کورٹ نے آبزرویشن دی کہ تازہ ترین تفتیش کے بعد اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ 70 سال پرانے اس کیس میں حاصل کرنے کو مزید کچھ نہیں اور کیس کی تحقیقات کی مزید کوئی ضرورت نہیں۔خیال رہے کہ گاندھی کو 30 جنوری 1948 ء کو فائرنگ کر کے قتل کیا گیا جس کے الزام میں نتھو رام گوڈسے اور مزید 2 افراد کو سزائے موت دی گئی۔

گاندھی قتل کیس

مزید : کراچی صفحہ اول