خان پور: بااثر شخص نے بیوی اور بیٹے کو اغوا کرلیا، شوہر کی ٹانگ توڑ دی

خان پور: بااثر شخص نے بیوی اور بیٹے کو اغوا کرلیا، شوہر کی ٹانگ توڑ دی
خان پور: بااثر شخص نے بیوی اور بیٹے کو اغوا کرلیا، شوہر کی ٹانگ توڑ دی

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

رحیم یار خان (ویب ڈیسک) چک 4 پی خانپور کے  محمد اکمل نے دعویٰ کیا کہ  کہ تین ماہ قبل دولت پور کے رہائشی رشید بھارا نے میری بیوی اور 6ماہ کے بیٹے کو اغوا کرلیا، واپسی کرنے کا لالچ دے کر رحیم یار خان نورے والی قبرستان میں بلا کر مار مار کر ادھوا کردیا اور ٹانگ توڑ کر بھاگ نکلے، قریبی لوگوں نے شیخ زید ہسپتال رحیم یار خان پہنچایا تو داکٹر نے ٹانگ میں پلیٹ ڈال کر دوبارہ چلنے پھرنے کے قابل بنایا۔ خان پور کے ایک شخص اظہار عباس نے اس کے تمام علاج معالجہ کی ذمہ داری اٹھائی ہوئی ہے۔

روزنامہ خبریں کے مطابق محمد اکمل نے بتایا کہ میں اپنے روزگار کے سلسلہ میں عرصہ ڈیڑھ سال قبل الیاس کالونی صادق آباد میں رہائش پذیر ہوگیا، میرا پیشہ حجام (ہیئر ڈریسر) کا کام ہے، میرے گھر میں ظالم شخص رشید بھارہ جو کہ دولت پور کا رہنے والا تھا آنا جانا تھا، جو میرا منہ بولا بھائی بنا ہوا تھا، میرے تعلق کا ناجائز فائدہ ا ٹھا کر میری بیوی سے ناجائز تعلق استوار کرلئے، منع کرنے پر میرے گھر میں لڑائی جھگڑے شروع ہوگئے، ایک دفعہ میں جب گھر آیا تو رشید بھارہ میرے گھر میں موجود تھا وہ مجھے دیکھ کر بھاگ گیا میں نے اپنی بیوی کو مار پیٹ کی کہ اس شخص کو میں نے اپنے گھر آنے سے روکا ہے، میری غیر موجودگی میں اس کو یہاں کیوں آنے دیا تو رشید بھارہ نے 15 پر کال کردی، پولیس تھانہ سٹی صادق آباد کا حوالدار نوید مجھے اور میری بیوی کو تھانہ لے گیا، پولیس نے جب پوچھا کہ 15 پر کال کس نے کی تو پتہ چلا کہ رشید بھارہ کے فون نمبر سے کال آئی ہے، تو پولیس نے ہم دونوں میاں بیوی کو بٹھا کر سمجھایا کہ آپ کا ایک بیٹا بھی ہے، آپ کسی غلط شخص کی وجہ سے اپنا گھر برباد نہ کریں اور پھر انہوں نے ہمیں اپنے گھر واپس بھیج دیا، ایک دن بعد میرا ایکسیڈنٹ ہوگیا، جب ہسپتال سے واپس آیا تو میری بیوی زہرہ اور میرا 6 ماہ کا بیٹا ابو بکر گھر میں موجود نہ تھے۔ پتہ کرنے پر بھی کوئی معلومات نہ ہوئی۔

میں وہاں سے اپنی رہائش چھوڑ کر اپنے ماں باپ کے پاس چک 4 پی آگیا، ڈیڑھ ماہ بعد ظالم رشید بھارہ نے مجھے فون کیا کہ مجھ سے غلطی ہوگئی ہے، میں نے آپ کے گھر کو اُجاڑ کر رکھ دیا ہے آپ اپنی بیوی زہرہ اور بیٹے ابوبکر کو آکر لے جاﺅ، جب میں رحیم یار خان پہنچا تو اس نے کہا کہ نورے والی پرانے قبرستان کے قریب آجاﺅ، جب میں نے ان کو فون کیا کہ میں یہاں پہنچ گیا ہوں تو رشید بھارہ اپنے دیگر تین نامعلوم اشخاص لے کر آگیا اور مجھے مارنا پیٹنا شروع کردیا، میری ٹانگ توڑ دی، قریب آنے  والے لوگوں نے مجھے شیخ زید ہسپتال رحیم یار خان پہنچایا، میں ہسپتال میں 12 دن داخل رہا  اور  شیخ زید ہسپتال نے میری ٹانگ میں پلیٹ ڈالی جس کے بعد اب میں تھوڑا سا چلنے پھرنے کے قابل ہوا ہوں، خانپور کے ایک شخص اظہار عباس جو کہ گلوکار ہے نے میرا تمام علاج معالجہ اور خرچ برداشت کیا اور اب بھی میں اس کے پاس رہائش پذیر ہوں۔