عدالتیں اتنی کمزور نہیں کہ اپنے فیصلے پر عمل درآمد نہ کرا سکیں،ہائی کورٹ کی اراضی کیس میں چیف سیکرٹری کی سرزنش

عدالتیں اتنی کمزور نہیں کہ اپنے فیصلے پر عمل درآمد نہ کرا سکیں،ہائی کورٹ کی ...
عدالتیں اتنی کمزور نہیں کہ اپنے فیصلے پر عمل درآمد نہ کرا سکیں،ہائی کورٹ کی اراضی کیس میں چیف سیکرٹری کی سرزنش

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائی کورٹ نے قرار دیا ہے کہ عدالتیں اتنی کمزور نہیں کہ اپنے فیصلے پر عمل درآمد نہ کرا سکیں،عدالتی احکامات پر عمل درآمد نہ کیا گیا تو توہین عدالت کی کاروائی عمل میں لائی جائے گی۔مسٹرجسٹس علی اکبر قریشی نے یہ ریمارکس چیف سیکرٹری پنجاب زاہد سعید کو توہین عدالت کیس کی سماعت کے دوران مخاطب کرتے ہوئے دیئے ۔

درخواست گزار طارق محمود نے عدالت میں موقف اختیار کیا ہے کہ عدالتی احکامات کے باوجود اس کی 20 کنال سے زائد اراضی کا قبضہ واگزار نہیں کرایا جا رہا،عدالتی حکم پر چیف سیکرٹری پنجاب زاہد سعید اور ایڈووکیٹ جنرل پنجاب شکیل الرحمن خان عدالت میں پیش ہوئے،انہوں نے عدالت سے احکامات پر عمل درآمد کے لئے مزید مہلت کی استدعا کی، عدالت نے اظہار برہمی کرتے ہوئے کہا کہ پہلے ہی بہت وقت دیا جا چکا ہے عدالتی احکامات پر عمل کرانا جانتے ہیں،عدالتیں اتنی کمزور نہیں کہ اپنے ایک فیصلے پر عمل درآمد نہ کرا سکیں،عدالت نے چیف سیکرٹری پنجاب کو دو ماہ میں عدالتی احکامات پر عملدرآمد کروا کر رپورٹ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے سماعت ملتوی کر دی ہے۔

مزید :

جرم و انصاف -