ملک بھرمیں دھرنے، مظاہرے، تکبر سے بھرا شخص لاشوں سے ضد لگا کر بیٹھا ہے آہ و بکا کو بلیک میلنگ کہنا شرمناک متاثرین وزیراعظم سے دست شفقت کے علاوہ کچھ نہیں مانگ رہے: مریم نواز

    ملک بھرمیں دھرنے، مظاہرے، تکبر سے بھرا شخص لاشوں سے ضد لگا کر بیٹھا ہے آہ ...

  

کوئٹہ،لاہور، کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک،جنرل رپورٹر،کرائم رپورٹر،نیوزایجنسیاں) سانحہ مچھ کے متاثرین کا غم کم نہ ہو سکا۔ کوئٹہ میں مچھ واقعہ کے خلاف ہزارہ برادری کا لاشوں کے ساتھ دھرنا چھٹے روز میں داخل ہو گیا، شہدا کمیٹی نے دھرنا ختم کرنے سے انکار کر دیا۔ متاثرہ لواحقین سے اظہار یکجہتی کیلئے لاہور، کراچی، کوئٹہ سمیت ملک بھر میں دھرنے اور احتجاجی مظاہرے جاری،ملک کے مختلف حصوں سے سیاسی قیادت دھرنوں کے شرکا سے اظہار یکجہتی کیلئے پہنچ گئی۔تفصیلات کے مطابق چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو کراچی سے کوئٹہ پہنچے اور دھرنے میں شرکت کی، یوسف گیلانی اور وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ بھی ان کے ساتھ تھے، بلاول بھٹو سمیت پی پی قیادت نے لواحقین سے تعزیت کی۔مریم نواز کی قیادت میں نواز لیگ کا وفد بھی کوئٹہ دھرنے میں پہنچا۔ انہوں نے ہزارہ برادری کے رہنماؤں سے مچھ واقعہ پر تعزیت کا اظہار کیا، خواتین کو بھی دلاسہ دیا، احسن اقبال، پرویز رشید، مریم اورنگزیب، رانا ثناء اور دیگر رہنما بھی لیگی وفد میں شامل تھے۔ جے یو آئی کے رہنما عبدالغفور حیدری نے بھی دھرنے میں متاثرین سے اظہار یکجہتی کیا۔ادھر کراچی میں بھی سانحہ مچھ سے اظہار یکجہتی کیلئے شہر کے 30 مقامات پر احتجاجی دھرنے جاری ہیں، دھرنوں کے باعث شہر کی مین شاہرایں بلاک ہیں۔ گھروں سے نکلنے والے شہری سڑکوں پر رل گئے۔شارع فیصل، یونیورسٹی روڈ، ایم اے جناح روڈ سمیت آئی آئی چندریگر روڈ سمیت دیگر پر ٹریفک معطل ہے۔ مرکزی دھرنا نمائش چورنگی پر جاری ہے جبکہ کورنگی، ناظم آباد، گلستان جوہر، سٹیل ٹاؤن، عائشہ منزل، سرجانی ٹاون، شاہ فیصل کالونی، ملیر، کورنگی انڈسٹریل ایریا سمیت تیس مقامات پر بھی چند مظاہرین نے سڑکیں بند کر رکھی ہیں۔کراچی میں مظاہرین اور شہریوں میں جھڑ پ ہوئی جس کے بعد 5 موٹرسائیکلوں کو آگ لگادی گئی۔لاہور میں گورنر ہاؤس، شاہدرہ، امامیہ کالونی، فیروز پور روڈ، چونگی امرسدھو، ملتان روڈ پرموہلنوال چوک پر احتجاجی مظاہرے، میٹروبس سروس کو قذافی سٹیڈیم تک محدود کر دیا گیا۔ میٹروبس کا سفر کرنے والے مسافروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ امامیہ کالونی پھاٹک بھی بند کر دیاگیا۔ مظاہرین نے حکومت سے انصاف کا مطالبہ کر دیا۔دوسری جانب گورنر ہاؤس مال روڈ، چونگی امرسدھو، امامیہ کالونی، سندر میں احتجاجی دھرنے جاری ہیں۔ شہر میں 4 مقامات پر دھرنوں کے باعث ٹریفک کا دھڑن تختہ ہو گیا۔ مال روڈ بند ہونے سے شہر کے اندرون ٹریفک شدید دباؤ کا شکار، چونگی امرسدھو پر دھرنے سے قینچی، نصیر آباد، کلمہ چوک پر ٹریفک کا دباؤ، مسلم ٹاؤن، اچھرہ، قرطبہ چوک پر بھی ٹریفک دباؤ کا شکار ہو گئی۔ سندر پر دھرنے کے باعث ٹھوکر، منصورہ، ملتان چونگی پر ٹریفک دباؤ کا  شکار، کھاڑک سٹاپ، سکیم موڑ، یتیم خانہ، سمن آباد، چوبرجی پر بھی ٹریفک کا دباؤ، امامیہ کالونی پر دھرنے کے باعث شاہدرہ، بتی چوک، آزادی چوک پر ٹریفک کا دباؤ، راوی روڈ، کریم پارک اور ٹیکسالی پر بھی ٹریفک کا شدید دباؤ ہے۔ شہری گھروں سے غیر ضروری مت نکلیں، احتیاط کریں۔شہر میں احتجاج کے باعث اہم شاہراہیں بند، شہرمیں ٹریفک کا نظام درہم برہم ہو گیا۔ امامیہ کالونی پھاٹک بند ہونے سے شاہدرہ میں گاڑیوں کی لمبی قطاریں لگ گئیں۔ فیروز پور روڈ اور ملتان روڈ پر بھی ٹریفک جام، مال روڈ اور اطراف کی سڑکوں پر بھی ٹریفک کا دباؤ، لاہور گوجرانولہ بھی ٹریفک کیلئے بند ہے۔ احتجاج کے باعث وارڈنز کی اضافی نفری تعینات کر دی گئی۔ سی ٹی او سید حماد عابد کا کہنا ہے کہ وارڈنز ٹریفک کو متبادل راستوں پر بھجوا رہے ہیں۔ سی ٹی او سید حماد عابد کا کہنا ہے کہ وارڈنز ٹریفک کو متبادل راستوں پر بھجوا رہے ہیں۔

دھرنے،مظاہرے 

کوئٹہ،لاہور، کراچی(مانیٹرنگ ڈیسک،نیوزایجنسیاں)مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے وزیر اعظم عمران خان کے بیان پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں کی آہ وبکا کو آپ بلیک میلنگ کہیں گے، تو اس پر آپ کو شرم آنی چاہیے۔ میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز کا کہنا تھا کہ  یہ بے حسی کی انتہا ہے، آپ پر 22 کروڑعوام کی ذمہ داری ہے، وہ اپنے لوگوں کی لاشیں آگے رکھ کر بیٹھے ہوئے ہیں، کیا ان کی لاشوں سے آپ کی انا بڑی ہے۔ مریم نواز نے کہا کہ وہ کہہ رہے ہیں آپ آجائیں اور اْن کیسروں پر ہاتھ رکھ دیں، وہ کہہ رہے ہیں انہیں کچھ یقین دہانیاں کرادیں، ہم لاشوں کو دفنادیں گے اور آپ اس کو بلیک میلنگ کہہ رہے ہیں، یہ آپ کا فرض ہے اور یہ اپ ٓکو کرنا پڑے گا۔مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے کہا کہ آپ کے پاس ترکش ڈرامہ دیکھنے اور اْن کے ایکٹرز سے ملنے کا وقت ہے، آپ کے پاس کتوں سے کھیلنے کا وقت ہے مگر مظلوم لوگوں کے سر پر ہاتھ رکھنے کا وقت نہیں،مسلم لیگ (ن) کی رہنما مریم نواز شریف نے ہزارہ برادری کے شہدا کی تدفین کے معاملے پر وزیراعظم عمران خان کے بیان پر انھیں انسانیت سے عاری انسان قرار دیدیا ہے۔مریم نواز شریف نے کہا کہ میری گزشتہ روز ہزارہ برادری کی کچھ خواتین سے ملاقات ہوئی جنہوں نے بتایا کہ ان گھر میں جنازے اٹھانے کیلئے کوئی مرد نہیں بچا۔ گزشتہ چھ روزسے قوم کی مائیں اور بہنیں‘’بے حس شخص”کا انتظار کر رہی ہیں۔ اگر ا?پ ان کے دکھ درد میں شریک نہ ہوئے تو بعد میں جانے کی ضرورت ہی کیا ہے۔انہوں نے وزیراعظم پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اگر تکبر کا کوئی چہرہ ہوتا تو وہ عمران خان کا چہرہ ہوتا جو مظلوموں کی لاشوں کیساتھ ضد لگا کر بیٹھے ہیں۔ متاثرین دست شفقت کے علاوہ وزیراعظم سے کچھ نہیں مانگ رہے۔مریم نواز شریف کا کہنا تھا کہ ہزارہ برادری کی وجہ سے پوری قوم سوگ میں ہے۔ ہزارہ برادری کے دکھ میں شریک ہونا وزیراعظم عمران خان کی ذمہ داری نہیں بلکہ فرض تھا۔ اس کا جواب آپ کو اللہ تعالیٰ اور عوام کو دینا پڑے گا۔ان کا کہنا تھا کہ قوم جاننا چاہتی ہے کہ ایسی کون سے مجبوری تھی کہ اس نے وزیراعظم کو ہزارہ برادری کے دھرنے میں جانے سے روکا۔ آپ شرطیں لگاتے ہو کہ میتیں دفنا دیں پھر آؤں گا۔ عوام کو بتایا جائے کہ یہ‘’تابعداری”ہے یا کسی قسم کی‘’توہم پرستی”ہے۔ آپ جا نہیں سکتے تو ہمدردی کے دو بول ہی بول دیتے۔مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب کا کہنا ہے کہ پارٹی قائد نواز شریف نے ہزارہ برادری کے احتجاج کی کال کی مکمل حمایت کا اعلان کرتے ہوئے ملک بھر میں جماعت کی مقامی قیادت اور کارکنان کو احتجاج میں بھرپور شرکت کی ہدایت کی ہے۔مریم اورنگزیب نے کہا کہ نوازشریف، شہبازشریف اور پوری جماعت اس مشکل گھڑی میں ہزارہ برادری کے غم میں شریک ہے جب کہ ہزارہ برادری کے شہداء کے معاملے کو پی ڈی ایم میں بھی لے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔عوامی نیشنل پارٹی کے سربراہ اسفندیار ولی نے وزیراعظم کے سانحہ مچھ میں جاں بحق ہونے والے افراد کی تدفین کے حوالے سے بیان پر ردعمل میں کہا کہ کپتان کا فرعونیت بھرا لہجہ بتا رہا ہے کہ ان کے دن گنے جا چکے ہیں۔اے این پی کے ترجمان زاہد خان نے وزیراعظم کے ہزارہ کمیونٹی سے متعلق بیان پر ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہاہے کہ وزیراعظم کا بیان ہزارہ کمیونٹی کی توہین کے مترادف ہے۔ وزیراعظم نے متاثرہ خاندانوں کے زخموں پر مرہم تو نہیں رکھا اوپر سے اس طرح کا بیان دیکر انکے زخموں پر نمک چھڑک رہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعظم کا بلیک میلنگ سے متعلق بیان بے حسی کی تمام حدیں کراس کر جانا ہے، نااہل وزیراعظم فوری طور پر بیان واپس لیکر کمیونٹی سے معافی مانگیں۔مولانا بخش چانڈیو نے کہا ہے کہ وزیراعظم کا ہزارہ برادری پر بلیک میلنگ کا الزام شرمناک ہے، انہوں نے ثابت کر دیا وہ کٹھ پتلی وزیراعظم ہیں۔بلوچستان نیشنل پارٹی کے سربراہ سرداراخترجان مینگل نے کہاہے کہ جب ملک کا وزیراعظم اپنے آپ کو محفوظ نہیں سمجھتا تواس ملک کی عوام کا اللہ ہی حافظ ہے،حکومت کو اپوزیشن جماعتوں کو دہشتگردوں سے خطرہ تو نظرآتاہے لیکن عوام کو ان دہشتگردوں سے خطرہ حکمرانوں کو نظر نہیں آتا، عمران خان نے اپنے مشیروں اور وزیروں کو بھیج کرلواحقین کے زخموں پر مرہم رکھنے کی بجائے نمک پاشی کی،نیوز لینڈ کی وزیراعظم نے منتخب وزیراعظم کی حیثیت سے اپنی ذمہ داری نبھاتے ہوئے مسلمانوں سے یکجہتی کی انہیں کابینہ سے اجازت لینے کی ضرورت نہیں پڑی۔

اپوزیشن 

مزید :

صفحہ اول -