کامونکے،بااثر افراد کا سکول ٹیچرکو اغواکرنے کے بعد تشدد

کامونکے،بااثر افراد کا سکول ٹیچرکو اغواکرنے کے بعد تشدد

  



 کامونکے(نمائندہ پاکستان+نامہ نگار) زمین کے تنازع پربااثر افراد نے سکول ٹیچرکو اغواکرنے کے بعد اپنے ڈیر ہ پر لے جاکر بیہمانہ تشددکا نشانہ بنادیا ، ایس ایچ او سٹی نے بروقت کاروائی کرتے ہوئے ایک گھنٹے میں مغوی کو ملزمان کے چنگل سے بازیاب کروالیا ملزمان فرارہونے میں کامیاب،تفصیل کے مطابق نواحی گاؤں کوٹلی دلباغ رائے کا رہائشی ماسٹر افتخار احمد گورنمنٹ پرائمری سکول مسلم گنج میں ٹیچر ہے جبکہ ماسٹرافتخار کا ملزمان صدیق وغیرہ کے ساتھ زمین کا تنازع چل رہاہے ،گزشتہ شام کے قریب ماسٹرافتخاراحمد اپنے ایک دوست لالہ غفار کے ہمراہ موٹرسائیکل پر کام کے سلسلہ میں جارہاتھا جب وہ پنجاب بنک جی ٹی روڈ کے سامنے پہنچے تو پیچھے سے ملزمان نے موٹرسائیکل اور کار پر سوار ملزمان صادق ولد صدیق، زوہیب ولد ثناء اللہ ،فاروق ولد محمد منشاء ،زاہد صدیق ،سلمان صدیق،ولید ولد محمد منشاء نے اپنے دیگر نامعلوم ساتھیوں کے ہمراہ سکول ٹیچرپر حملہ کردیا اورتشددکرتے ہوئے زبردستی اپنی کار میں ڈال کر اغواکرکے اپنے ڈیرہ پر لے گئے جہاں پر لیجا کر ملزمان نے ماسٹرافتخار کو بے دردی کے ساتھ تشددکانشانہ بناکر منہ اور جسم کا حلیہ بگاڑ دیا جس کی اطلاع پر ڈی ایس پی سرکل کامونکے عبدالرؤف چشتی کی ہدایت پر ایس ایچ او سٹی زاہد حسین شاہ نے نفری کے ہمراہ کامیاب ریڈکرکے مغوی ملزمان کے چنگل سے بازیاب کروالیا جبکہ ملزمان فرارہونے میں کامیاب ہوگئے ،پولیس نے ملزمان کے خلاف مقدمہ درج کرکے ان کی گرفتاری کے لئے چھاپہ مار ٹیمیں تشکیل دیدی ہیں ،مغوی کے بھائی محمد بلال نے بتایا کہ ملزمان بااثر ہیں اور ان کو سیاسی پشت پناہی حاصل ہے اور وہ دھمکیاں دیتے ہیں کہ گاؤں چھوڑ کر چلے جاؤ ورنہ تم سب کو قتل کردیں گے۔

،متاثرین نے وزیراعلیٰ پنجاب سے اپیل کی ہے کہ ان کے ملزمان کو گرفتارکرکے ان کو انصاف فراہم کیاجائے ۔

مزید : علاقائی


loading...