چلی کی پارلیمنٹ نے عوام کوبھنگ کاشت کرنے کی اجازت دیدی

چلی کی پارلیمنٹ نے عوام کوبھنگ کاشت کرنے کی اجازت دیدی
چلی کی پارلیمنٹ نے عوام کوبھنگ کاشت کرنے کی اجازت دیدی

  


سینتیاگو(اے این این) چلی کی پارلیمان نے عوام کو چھوٹے پیمانے پر بھنگ کاشت کرنے کی اجازت دینے کا بل پاس کرلیا ، نئے قانون کے تحت چلی کے ہر گھر کو زیادہ سے زیادہ چھ پودے لگانے کی اجازت ہوگی۔غیرملکی میڈیا کے مطابق چلی کی پارلیمان نے ایک بل منظور کیا ہے جس کے تحت وہاں کے باشندوں کو چھوٹے پیمانے پر بھنگ کی کاشت کی اجازت ہوگی۔یہ بل ملک کے ایوان زیریں نے منظور کیا ہے جس کے تحت طبی، تفریحی یا روحانی استعمال کے لیے چھوٹے پیمانے پر بھنگ کی کاشت کی اجازت ہو گی۔ اس کے تحت چلی کے ہر گھر کو زیادہ سے زیادہ چھ پودے لگانے کی اجازت ہوگی۔اب تک بھنگ کا پودا لگانا، اس کا فروخت کرنا اور اس کے نقل و حمل پر پابندی تھی اور اس کی خلاف ورزی کرنے والے کو زیادہ سے زیادہ 15 سال تک کی سزا ہو سکتی تھی۔یہ نیا بل پہلے کمیشن برائے صحت کے پاس جائے گا پھر سینیٹ میں منظوری کے لیے پیش کیا جائے گا۔

ایوان زیریں کے اراکین نے اس بل کو واضح اکثریت 39 کے مقابلے 68 ووٹوں سے منظور کیا ہے۔بہر حال کئی قانون سازوں (اراکین پارلیمان) نے اس نتیجے کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے منشیات کے استعمال کو تقویت ملے گی۔چلی کی ایک میونسپلٹی نے اکتوبر میں پہلی بار حکومت کے ایک آزمائشی پروگرام کے تحت طبی استعمال کے لیے بھنگ کے پودے لگائے۔اگر یہ بل منظور ہو جاتا ہے تو پھر اس کا تفریحی استعمال مجرمانہ عمل نہیں رہ جائے گا۔

مزید : ڈیلی بائیٹس