کول پاور پلانٹ رحیمیار خان کے بجائے لاہور میں لگایا جائے،ظہور دھریجہ

کول پاور پلانٹ رحیمیار خان کے بجائے لاہور میں لگایا جائے،ظہور دھریجہ

ملتان (سٹی رپورٹر)کول پاور پلانٹ رحیم یارخان کی بجائے لاہور میں لگائیں اور وسیب کو موت بانٹنے والی انڈسٹری کی بجائے ایسے کارخانے دیں جو آلودگی سے پاک ہوں ۔ ان خیالات کا اظہار سرائیکستان قومی کونسل کے صدر ظہور دھریجہ نے جام اے ڈی دھاندھو کی قیادت میں آئے ہوئے وفد (بقیہ نمبر20صفحہ12پر )

سے ملاقات کے دوران کیا ۔ وفد میں آصف ملک ، حاجی خضر حیات ترگڑ ، ملک عالم شیر اعوان اور جام احمد محمود دھاندھو شامل تھے ۔ ظہور دھریجہ نے کہا کہ سندھ سرائیکستان بارڈر پر کھاد کے کارخانوں اور ڈسٹرکٹ رحیم یارخان میں شوگر ملوں کی آلودگی نے تباہی مچا رکھی ہے اور کینسر ، یرقان اور اندھے پن کی بیماریاں ماحولیاتی آلودگی کی وجہ سے عام ہو چکی ہیں ۔ زیر زمین پانی کڑوا اور زہریلا ہو رہا ہے۔ زہر پھیلانے والے کارخانوں کی وجہ سے عام کے باغات کو شدید نقصان پہنچ رہا ہے اور کاٹن تباہ ہو چکی ہے۔ اس لئے ہمارا مطالبہ ہے کہ کول پاور جو کہ سب سے زیادہ زہریلی آلودگی پھیلاتا ہے ‘ کو رحیم یارخان میں لگانے کی بجائے لاہور میں لگایا جائے اور سرائیکی وسیب میں ایسے کارخانے لگائے جائیں جو آلودگی سے پاک ہوں اور جس سے لوگوں کو روزگار حاصل ہو ۔ ظہور دھریجہ نے کہا کہ اگر فیصلہ واپس نہ لیا گیا تو ہم نہ صرف رحیم یارخان بلکہ پورے وسیب میں احتجاج کریں گے ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر