بی آئی ایس پی کو موثر ادارہ بنانے کیلئے اہم اقدامات کئے، ڈاکٹر ثانیہ

بی آئی ایس پی کو موثر ادارہ بنانے کیلئے اہم اقدامات کئے، ڈاکٹر ثانیہ

  

اسلام آباد(آن لائن) بی آئی ایس پی بورڈ کے33ویں اجلاس کا انعقاد،بی آئی ایس پی ہیڈکوارٹرز میں چیئرپرسن بی آئی ایس پی ڈاکٹر ثانیہ نشتر کی زیر صدارت ہوا۔ اجلاس میں سیکرٹری بی آئی ایس پی علی رضا بھٹا سمیت بورڈ ممبران قاضی عظمت عیسی، خانور ممتاز، ظفر اے خان، عاطف باجوہ،وزارت بین الصوبائی تعاون، فنانس ڈویژن اوراکنامک افیئرڈویژن کے نمائندگان نے شرکت کی۔آٹھ ماہ کے عرصہ کے دوران چیئرپرسن بی آئی ایس پی کی زیر صدارت یہ بی آئی ایس پی بورڈ کا چوتھا اجلاس تھا۔اجلاس کے دوران چیئرپرسن نے پروگرام میں بہتری لانے کیلئے شفافیت، احتساب اور میرٹ کو یقینی بنانے کیلئے اپنے عزم کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ بی آئی ایس پی بورڈ اور انتظامیہ نے بی آئی ایس پی کو ایک موثر ادارہ بنانے کیلئے اہم اقدامات کئے ہیں۔اجلاس کے دوران مالی سال 2019-20کیلئے بجٹ اور بورڈ کی مختلف کمیٹیوں کی جانب سے پیش کی جانے والی سفارشات سمیت دیگر ایجنڈا آئٹمزپر تفصیل سے بحث کی گئی۔ ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے وضاحت کی کہ ہم نے بورڈ کی ذیلی کمیٹیوں کو بااختیار بنایا اور ان کے مابین رابطوں کو ممکن بنایا تاکہ ایجنڈا اچھی طرح سے تیار کیا جائے اور ذیلی کمیٹیاں تفصیلی بحث کے بعد اسے بورڈ کے سامنے پیش کریں۔ڈاکٹر ثانیہ نشتر نے بورڈ کو حال ہی میں ہونے والے رسک اشورنس کمیٹی کے اجلاس کے بارے میں بتایا اور بی آئی ایس میں رسک رجسٹر کا نظام متعارف کرنے کے حوالے سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ جلد ہی دھوکہ دہی اور بدعنوانی سے تحفظ اور دیگر خطرات سے بچاؤ کاجائزہ لینے کیلئے مخصوص اجلاس طلب کیا جائیگا۔ انہوں نے مزید کہا کہ بی آئی ایس پی حکومت کا وہ پہلاادارہ ہوگا جس کے پاس خطرات کی شناخت اور ان پر قابو پانے کا منظم اور جدید نظا م موجود ہے۔ انہوں نے کہا کہ احساس کے تحت تعلیم کے مشروط مالی معاونت پروگرام کو بھی وسعت دی جائے گی اور صحت اور غذائیت کے ایک نئے پروگرام کو ڈیزائن کیا جائے گا۔غریب خاندانوں کیلئے صحت اور اس سے متعلق اخراجات میں سہولت فراہم کرنے کیلئے بھی احساس ایک سیفٹی نیٹ کا کام کرے گا۔اس پروگرام کو "تحفظ"کا نام دیا جائیگا۔

 ڈاکٹر ثانیہ

مزید :

صفحہ آخر -