موٹاپے کا شکا ر نو الحسن بروقت طبی امداد نہ ملنے پر انتقال کر گیا

      موٹاپے کا شکا ر نو الحسن بروقت طبی امداد نہ ملنے پر انتقال کر گیا

  

لاہور،راولپنڈی(جنرل رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک) موٹاپے کا شکار 330 کلو وزنی صادق آباد کا رہائشی نورالحسن لاہور کے شالیمار ہسپتال میں ہارٹ اٹیک کی وجہ سے انتقال کر گیا ۔ نور الحسن کی موت ہارٹ اٹیک کی وجہ سے ہوئی، نور الحسن کے ڈاکٹر معاذ نے بتایا کہ ہسپتال کے آئی سی یو میں خاتون مریضہ کی ہلاکت کے بعد مریضہ کے لواحقین نے ہسپتال میں ہنگامہ آرائی کی جس کے بعد ہسپتال کے آئی سی یو سے ڈاکٹر اور عملہ بھاگ گیا، آئی سی یو میں 2 گھنٹے تک کوئی موجود نہ تھا، ہسپتال میں توڑ پھوڑ کی وجہ سے نور الحسن کی موت واقع ہوئی ۔ ایک اور مریض بھی اس ہنگامے کے دوران انتقال کر گیا،نورالحسن کی بیوی نے بتایا کہ آپریشن کے بعد نورالحسن ہاتھ پاؤں کو حرکت دے رہا تھا بالکل ٹھیک تھا ۔ نورالحسن کی وفات پر سارا شہر سوگوار ہے ۔ صادق آبا د مےں نورالحسن کی نمازجنازہ مرکزی عیدگاہ میں ادا کر دی گئی جس میں سیاسی وسماجی شخصیات نے بڑی تعداد میں شرکت کی،بعدازاں نورالحسن کوآبائی قبرستان میں سپردخاک کر دیا گیا ۔ نورالحسن کو 17 جون کو صادق آباد سے شالامار ہسپتال لایا گیا، 10 روز تک شالامار ہسپتال میں نور الحسن کے میڈیکل فٹنس ٹیسٹ لیے گئے، میڈیکل بورڈ کی اجازت کے بعد 11 ویں روز نور الحسن کا آپریشن کیا گیا، آپریشن کے بعد نور الحسن کو آئی سی یو میں منتقل کر دیا گیا تھا ۔ ڈاکٹرز کی جانب سے نور الحسن کا آپریشن کامیاب قرار دیا گیا تھا ۔ دوسری جانب آئی ایس پی آر کی جانب سے جاری بیان میں آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے نور الحسن کی وفات پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اللہ پاک نور الحسن کی مغفرت کرے اور درجات بلند کرے، اللہ کی مرضی، انسان صرف کوشش کرسکتا ہے ۔ دریں اثناء وزیر صحت پنجاب ڈاکٹر یاسمین راشد نے موٹاپے کا شکار نور الحسن کی موت کے معاملے پر نوٹس لے لیا، معاملے کی تحقیقات کے لئے 3رکنی کمیٹی بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ سیکرٹری سپیشلائزڈ ہیلتھ کئیر مومن آغا نے کہا ہے کہ معاملے کی مکمل تحقیقات کے لئے تین رکنی کمیٹی تشکیل دی جا رہی ہے، ذمہ داروں کےخلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی، تحقیقاتی ٹیم میں پروفیسرز اور ڈاکٹرز شامل ہیں نور الحسن کی دیکھ بھال کے لئے خصوصی بورڈ تشکیل دیا گیا تھا ۔

نور الحسن

مزید :

صفحہ اول -