ریسیلی آرٹ کے موضوع پر یونیسکو کی آن لائن نشست کا انعقاد

ریسیلی آرٹ کے موضوع پر یونیسکو کی آن لائن نشست کا انعقاد

  

لاہور(پ ر)پاکستان میں ثقافت،سیاحت، دستکاری اور فنونِ لطیفہ کے شعبوں پر کووڈ 19کے اثرات کا جائزہ لینے کے لئے یونیسکو پاکستان کی طرف سے "ریسیلی آرٹ" کے موضوع پر آن لائن نشست کا انعقاد کیا گیا۔ یونیسکو کی اس عالمی تحریک کامقصد موجودہ دور کے چیلنچز کا مقابلہ کرنے کے لئے فنکاروں اور آرٹ سے وابستہ افراد کی استعداد کار کو بڑھانا، پالیسی مرتب کرنا اور مالیاتی طریقہ کار کی ترقی میں حکومتوں کو مدد فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ کووڈ 19 کے سبب پیدا شدہ بحران کا مقابلہ کرنے کا حل تلاش کرناہے۔ یونیسکوکے ریسیلی آرٹ ویبینار میں شامل نامور آرٹسٹ و چیئرپرسن فیض فاؤنڈیشن ٹرسٹ سلیمہ ہاشمی، ڈی جی والڈ سٹی اتھارٹی کامران لاشاری، ڈائریکٹر آرٹس اینڈ کلچر لاہور آرٹس کونسل الحمرا ذوالفقارعلی زلفی، ڈائریکٹر پنجاب کونسل آف دی آرٹ تانیہ ثانی، پروگرام منیجر پنجاب ٹوریزم فار اکنامک گروتھ پروجیکٹ وقاص ملک، فاؤنڈر ممبر ڈاچی فاؤنڈیشن عائشہ نورانی اور سنگِ میل پبلیکیشن سے علی کامران نے فنونِ لطیفہ پر کووڈ 19 کے اثرات پر گفتگو میں اپنا اپنا نقطہ نظر پیش کیا۔چیئرپرسن بورڈ آف گورنرز لاہور آرٹس کونسل الحمرا و سماجی کارکن منیزہ ہاشمی نے بطور میزبان پروگرام کا باقاعدہ آغاز کیا۔ ڈائریکٹر یونیسکو پاکستان پٹریشیامکفلپس نے ویبینار میں شرکت کرنے والے تمام ارکان کے خیالات و آرا کا خیر مقدم کرتے ہوئے انکا شکریہ ادا کیا۔

ر اس گفتگو کو فنون لطیفہ کی ترویج و ترقی کے لئے معاون قرار دیا۔ یونیسکو پاکستان حکومتِ پنجاب کو تکنیکی مدد فراہم کرنے کے لئے پنجاب ٹورازم فار اکنامک گروتھ پروجیکٹ کے ساتھ تعاون کر رہا ہے۔ سیاحت کی صنعت بھی تعطل کا شکار ہے اور لوگوں کو لاک ڈاؤن کی وجہ سے غیر معمولی حالات کا سامنا ہے جس سے نکلنے کے لئے یونیسکو کی یہ نشست پائیدار حل فراہم کرنے میں معاون ثابت ہوگی۔ یہ گفتگو ناظرین کے لئے فیس بک پر آن لائن نشر کی گئی جسے افراد کی کثیر تعداد نے دیکھا اور پسند کیا۔

مزید :

کلچر -