اگست میں ایک بڑے فیشن شو کے انعقاد کیلئے کوشاں ہیں: زرقا بشیر

اگست میں ایک بڑے فیشن شو کے انعقاد کیلئے کوشاں ہیں: زرقا بشیر

  

 کراچی (نمائندہ خصوصی: شمس تبریزی) فیڈریشن آف پاکستان چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کی اسٹینڈنگ کمیٹی برائے اپیرل اینڈ ڈیولپمنٹ کی نشست کنوینر زرقابشیر کی زیر صدارت ہوئی۔ نشست میں ڈپٹی کنوینر مہرین الہی، ڈائریکٹر آئی پی آر ڈیپارٹمنٹ نائمہ بتول، شہزاد مبین، شبانہ آصف، شایان ملک، تہذیب، محمد آصف خان، ارم فواد، طلبہ اور دیگر نے بھرپور انداز میں شرکت کی۔نشست میں کنوینر زرقا بشیر کا کہنا تھا کہ اگست میں ایک بڑے فیشن شو کے انعقاد کیلئے کوشاں ہیں ہماری کوشش ہے کہ ایک ایسی اکیڈمی کا قیام عمل میں لایا جائے جہاں خواتین کو فیس نہ دینی پڑے اور وہ اپنی خداداد صلاحیتیں بروئے کار لاتے ہوئے اچھے انداز میں اپنے مثبت کردار سے معاشرے کی تعمیرو ترقی میں کردار ادا کریں فیشن سے وابستہ طلبہ اپنے پروڈکٹس میرے آؤٹ لیٹ میں رکھ کر بیچ سکتے ہیں آپ سے کوئی منافع بھی نہیں لیا جائے گا نئے ٹیلنٹ کو اجاگر کرنے کیلئے ہم ہر لحاظ سے مواقع فراہم کریں گے حکومت سے گزارش ہے کہ خواتین کو آسان شرائط پر 0% مارک اپ پر قرض کی فراہمی ممکن بنائی جائے۔ ڈائریکٹر آئی پی آر ڈیپارٹمنٹ نائمہ بتول کا کہنا تھا کہ کسٹم کی جانب سے ہمارا ڈیپارٹمنٹ ہمہ وقت آپ کی خدمت کیلئے حاضر ہے کوئی آپ کا ٹریڈ مارک نام یا کاپی رائٹس کی خلاف ورزی کرتے ہوئے استعمال کرے تو آپ ہم سے فورا رجوع فرما سکتے ہیں مستقل بنیادوں پر کام کرنے کیلئے کاپی رائٹ اور ٹریڈ مارک رجسٹرڈ کروائیں اپنا ٹریڈ مارک اپنے ملک میں رجسٹرڈ کروائیں کسٹم کی جانب سے آگاہی ورکشاپ کے ذریعے بزنس کرنے والوں کو بنیادی ضروریات سے آگاہ کیا جاتا ہے کاپی رائٹس کی خلاف ورزی پر کوئی رعایت نہیں دی جاتی آئی پی آر ڈیپارٹمنٹ سامان کی نیلامی کے بجائے تلف کرتا ہے تاکہ آئندہ کوئی کسی کا نام استعمال نہ کرے اپنے ٹریڈ مارک کو زیادہ مدت تک غیر استعمال نہ رکھیں۔ دیگر شرکاء  نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ خواتین جو گھروں سے کام کررہی ہیں ایک کمرے میں اپنے سامان کیلئے آؤٹ لیٹ قائم کریں تاکہ کسٹمر مطمئن ہوں نئی ٹیکنالوجی سے جلد از جلد آراستہ ہوں تاکہ آپ کا بزنس مارکیٹ کی موجودہ صورتحال کے مطابق ترقی کرے خواتین کو سوشل میڈیا کے ذریعے کاروبار کو وسعت دینی چاہیے آن لائن بزنس پر آمادہ کرنے کیلئے ورکشاپ اور سیمینار کا انعقاد ضروری ہے اپنے کام میں ایمانداری لائیں مقامی اور بین الاقوامی مارکیٹ تک بذریعہ سوشل میڈیا رسائی ممکن بنائیں لاک ڈاؤن کے باعث فیشن انڈسٹری کو بہت نقصان ہوا ہے اس جدید دور میں خواتین کو نئی جدت سے ضرور آراستہ کرنا چاہیے کرونا کے باعث آن لائن کام نے برق رفتاری سے ترقی حاصل کی ہے سوشل میڈیا پر کام کرنے کیلئے باقاعدہ تربیت یافتہ عملہ ہونا چاہیے 

مزید :

پشاورصفحہ آخر -