پروفیسر وارث میر کی برسی پر خصوصی سیمینار آج ہوگا 

 پروفیسر وارث میر کی برسی پر خصوصی سیمینار آج ہوگا 

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(پ ر) ممتاز صحافی، دانشور اور استاد پروفیسر وارث میر کا آج یوم وفات ہے۔ جو 9 جولائی 1987 کو صرف 48 برس کی عمر میں انتقال کر گئے تھے. انکی صحافتی اور جمہوری خدمات کے حوالے سے آج لاہور کے الحمرا ہال نمبر 1 میں سہ پہر ساڑھے 4 بجے ایک سیمینار کا انعقاد ہو گا جس کی صدارت صدر آصف علی زرداری کریں گے۔ صدر زرداری پروفیسر وارث میر کی جمہوری خدمات پر گفتگو کے علاوہ پنجاب یونیورسٹی کے سکول آف ماس کمیونیکیشن میں پہلی تین پوزیشنز حاصل کرنے والی طالبات میں وارث میر اچیومنٹ ایوارڈز بھی تقسیم کریں گے۔ یاد رہے کہ وارث میر پنجاب یونیورسٹی لاہور میں شعبہ صحافت کے سربراہ  ہونے کے باوجود ضیا دور میں اپنے اصولی موقف پر ڈٹے رہے اور کلمہ حق بلند کرتے رہے۔ انہوں نے اپنے صحافتی کیریئر کے دوران پاکستان کے تمام بڑے اردو اخبارات کے لیے پرمغز مضامین تحریر کئے جنہیں ان کی وفات کے بعد کتابوں کی صورت میں شائع کیا گیا۔ ان کی مشہور کتابوں میں وارث میر کا فکری اثاثہ، حریت فکر کے مجاہد، ضمیر کے اسیر، فوج کی سیاست، اور کیا عورت آدھی ہے شامل ہیں۔ جمہوریت کی بحالی اور آزادی صحافت کے لیے بے مثال جدوجہد کے اعتراف میں ریاست پاکستان نے انہیں 2012 میں پاکستان کے اعلیٰ ترین سِول ایوارڈ ”ہلال امتیاز“ سے نوازا۔ 2013  میں بنگلہ دیشی حکومت نے وارث میر کی صحافتی خدمات کے اعتراف میں انہیں ”فرینڈز آف بنگلہ دیش ایوارڈ" سے نوازا۔ جون 2020 میں پنجاب اور سندھ کی اسمبلیوں نے وارث میر کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے ان کے حق میں متفقہ قراردادیں منظور کیں۔