لاہور میں تین لڑکیوں کا ہراسانی کا الزام لگا کر نوجوان پر ٹک شاپ میں تشدد، پولیس کا کردار بھی شرمناک، مضروب کو ہی گرفتار کرلیا

لاہور میں تین لڑکیوں کا ہراسانی کا الزام لگا کر نوجوان پر ٹک شاپ میں تشدد، ...
لاہور میں تین لڑکیوں کا ہراسانی کا الزام لگا کر نوجوان پر ٹک شاپ میں تشدد، پولیس کا کردار بھی شرمناک، مضروب کو ہی گرفتار کرلیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور (ویب ڈیسک) پنجاب کے دارالحکومت کے علاقے گارڈن ٹاؤن میں دکان پر تین لڑکیوں نے نوجوان ملازم کو ہراسانی کا الزام عائد کر کے تشدد کا نشانہ بنا ڈالا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کے علاقے گارڈن ٹاؤن میں واقع ٹک شاپ پر تین لڑکیاں آئیں جنہیں مبینہ طور پر بااثر خاندان کا فرد بتایا جارہا ہے۔لڑکیوں نے دکان پر کام کرنے والے نوجوان سے تلخ کلامی کے بعد اُس پر ہراسانی کا الزام عائد کیا اور پھر اُسے بدترین تشدد کا نشانہ بنایا، اس دوران دکان پر کھڑے گاہکوں میں سے کسی نے لڑکے کو بچانے کی کوشش نہیں کی البتہ ایک بزرگ آگے بڑھے تو لڑکیاں اُن پر چیخنے لگیں۔

بعد ازاں لڑکیوں نے تشدد کا شکار لڑکے کے خلاف ہی مقدمہ درج کروایا اور ایف آئی آر میں مؤقف اختیار کیا کہ لڑکے نے ہماری نقل اتاری اور ہمیں دیکھ کر ہنسا، پھر اُس نے ہمیں ہراساں کیا حالانکہ سامنے آنیوالی ویڈیو میں ایسا کچھ نہیں، شہری اب سوال اٹھا رہے ہیں کہ آیا پولیس بھی امیر لڑکیوں  کے آگے ہتھیار ڈال دے گی یا پھر ویڈیو کو دیکھنے کے بعد انصاف کے تقاضے پورے کرتے ہوئے غریب لڑکے کو بھی انصاف دلائے گی ۔ 

دکان مالک کے مطابق تھانہ گارڈ ٹاؤن پولیس نے ملازم کو گرفتار کرلیا جبکہ انہوں نے ہراسانی کے الزام کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ لڑکیاں بڑے وکیل کی بیٹیاں ہیں تو پولیس نے ہماری ایک نہیں سنی، ویڈیو دیکھنے کے باوجود بھی اُسے گرفتار کیا۔