بادشاہ خان ڈبلیو ڈبلیو ای میں سبز ہلالی پرچم لہرانے کیلئے پرامید

بادشاہ خان ڈبلیو ڈبلیو ای میں سبز ہلالی پرچم لہرانے کیلئے پرامید

  

ٹیکسلا(آن لائن) واہ کینٹ کے نزدیک گاؤں ڈولیان میں مقیم 21 برس کے نوجوان ریسلر بادشاہ خان کے خاندان کو امید ہے کہ یہ نوجوان ورلڈ ریسلنگ انٹرٹینمنٹ (ڈبلیو ڈبلیو ای) کے اسٹیج پر پاکستان کا سبز ہلالی پرچم لہرائے گا۔ڈولیان بادشاہ پہلوان خان کا آبائی گاؤں ہے، جبکہ ان کی پرورش فرانس میں ہوئی، وہ پیشہ ورانہ ریسلنگ میں واحد پاکستانی ہیں۔پاکستانی پرچم کے ساتھ چمکدار سبز و سفید لباس میں ملبوس بادشاہ خان نے پیشہ ورانہ ریسلنگ کا آغاز 2012ء4 میں کیا۔دوسال قبل انہیں یورپ کی مشہور پیشہ ورانہ ریسلنگ کی کمپنی ریسلنگ اسٹارز (کیچ ڈبلیو ایس) نے فرانس میں سائن کیا تھا۔ اس کے بعد سے وہ یورپ بھر کے مقابلوں میں حصہ لے رہے ہیں۔بادشاہ پہلوان خان نے اپنے پارٹنر تیونس کے الجہان کے ساتھ بھی مقابلوں میں حصہ لیا۔ان کے چچا سید نثار احمد، ارشاد احمداور امتیاز احمد کہتے ہیں کہ انہیں فخر ہے کہ ان کا بھتیجا پروفیشنل ریسلنگ کی دنیا میں داخل ہونے والا پہلا پاکستانی ہے۔نثار احمد کا کہنا تھا کہ ’’بادشاہ خان جو اس وقت پیرس میں مقیم ہے، ڈبلیو ڈبلیو ای میں شامل ہونے کی تیاری کررہا ہے۔‘‘گاؤں ڈولیان میں صحافیوں کے ایک گروپ سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان کے بھائی فیاض احمد اور ان کا خاندان اس وقت پیرس منتقل ہوگیا تھا، جب کہ بادشاہ خان کی عمر دس برس تھی۔پیرس میں پیشہ ورانہ ریسلنگ میں اس کی دلچسپی بڑھتی گئی، اور اس نے ڈبلیو ڈبلیو ایف میں شمولیت کے تربیت لینا شروع کردی۔بادشاہ خان کے چچا ارشاد احمد نے کہا ’’اگرچہ بادشاہ خان فرانس میں پروان چڑھا ہے۔

، تاہم اس کا دل پاکستانی ہے۔ اس کا ریسلنگ کا ڈریس پاکستانی پرچم کے مشابہہ ہے۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -